All Pakistani Dramas Lists
Latest Episodes of Dramas - Latest Politics Shows - Latest Politics Discussions

Page 1 of 2 12 Last

Thread: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

      
   
  1. #1
    suave's Avatar
    suave is offline Expert Member
    Cosmopolitan!
     
    Join Date
    Dec 2008
    Location
    Luxemburg
    Posts
    5,476
    Quoted
    775 Post(s)

    Lightbulb Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Omid Safi | Mar 31, 2012 | Comments (5)
    Share







    There is alarming news about the rising racist and xenophobic movements in Europe, often called “Far Right”. A hundred years ago European racism was directed against Jews, and today virtually the same prejudice: Back then it was the “Can you be Jewish and European” question, today it is the “can you be Muslim and European” provocation.



    The bad news is real: for the first time ever there was a coordinated rally of many Islamophobic groups across Europe.
    The rally, held in Denmark on March 30th, was coordinated by the English Defence League (EDL), which opposes what it calls the “Islamification of Europe.”
    These groups are now demonstrated to have neo-Nazi connections.

    Previous investigations by the Guardian have revealed the seriousness of their hate agenda.

    According to the BBC, the far-right and racist groups expert Matthew Goodwin, has noted the significance of this rally: “What we are seeing here for the first time in British political history is an anti-Muslim far-right organisation taking the lead in trying to mobilise pan-European opposition to Islam,” he said.



    Anders Breivik, the Norwegian terrorist, maintained a close friendship with many EDL members.
    So that’s the bad news, that these groups exist, they are growing in number, that they are getting a pass from the British press, and that they are now organizing and networking with similar hate organizations across Europe.
    Yet, there is some good news: The rally in Denmark failed to attract the number of participants that its fascist, Neo-Nazi organizers were hoping, topping off at about 160 members. More importantly, they were opposed by some 4,000 counter-protesters who rejected the rising tide of Islamophobia across Europe.
    In a distinctly European phenomenon, the previous such attempt by the Neo-Nazi Islamophobes was turned back by a combination of anti-racist groups and the supporters of the popular Ajax football team! (Neo-Nazi groups like EDL have in the past used incitments in football games to initiate riots.)



    Furthermore, these NeoNazi fascist organizations are linked to the American xenophobic and Islamophobic organizations like Jihad Watch (led by Robert Spencer) and Pamela Geller’s Atlas Shrugged, as well as groups with titles like “Stop the Islamization of America” (led by both Spencer and Geller) that opposed the Park51 Project [the “so-called Ground Zero Mosque”—which was in reality neither a mosque nor at Ground Zero.] The EDL had also invited Terry Jones, the mustached, Qur'an-burning pastor from Florida, to their demonstrations. In other words, we see that Islamophobia is now a trans-Atlantic phenomenon.The moral of the story seems to be clear: the line between good and bad, hate and love, light and darkness, does not go between religions or nations. It is a struggle inside each and every single one of our hearts, our families, our communities, our nations, and our religions. While it is alarming that there is an increasing tide of Neo-nazi Islamophobia in Europe, it is also assuring that many more people are rising up to them to propose a different vision of Europe. Ultimately, what we are faced with is not a clash of Islam vs. the West (as the EDL and the American Islamophobes would have us believe), but rather a struggle inside Islam and another struggle inside Europe and America.
    Our best hope for a life of shared dignity rooted in peace and justice is for all of us who see our strength to be connected to our diversity—and not weakened by that—to reach out together to oppose those hateful voices that inevitably will incite here and there. That seems to be what the Europeans are already learning, and hopefully we Americans will as well.



    Image 1 is from BBC.
    image 2 is from Guardian
    Image 3 is from Salon.
    Religion News Service | Blogs | Omid Safi - What Would Muhammad Do? | Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism



  2. The Following 5 Users Say Thank You to suave For This Useful Post:

    iamamuslim (04-06-2012), R4BIAN (04-05-2012), romesa (04-05-2012), saboorkhan (04-04-2012), __QanOOn__ (04-05-2012)

  3. #2
    DengueNumber1 is offline Junior Member
    Edit>
     
    Join Date
    Mar 2012
    Posts
    274
    Quoted
    106 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    dont worry ... Bradford or Birmingham kay Pakistani in sare goron ko aek din main thik kardeinagy ... u dont know situation there .. they are all gangsters will get sh..t out of these goras ... just chill

  4. #3
    miranda's Avatar
    miranda is offline Expert Member
    Aladin ka chiragh
     
    Join Date
    Jun 2008
    Posts
    7,141
    Quoted
    2146 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Alarming situation !!!

  5. #4
    Double Shah's Avatar
    Double Shah is offline ان شاء اللہ ، ان شاء اللہ
    Edit>
     
    Join Date
    Jun 2008
    Location
    London
    Posts
    1,912
    Quoted
    461 Post(s)

    Thumbs up Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    واقعی یہ ایک اچھی خبر نہیں مگر ابھی بھی حالات اس نہج پر نہیں پہنچے کہ سب برا سمجھ لیا جاۓ ۔ مجھے کچھ عرصہ پہلے اتفاقی طور پر ایک ایسے جلوس کا سامنا کرنا پڑا جو اوپر بیان کے گئے لوگوں کی شدید مذمت کر رہا تھا ۔ اچھا پہلو یہ تھا کہ اسمیں گوروں کی تعداد مسلمانوں سے زیادہ تھی ۔ اور یہ کافی بڑا جلوس تھا جو کہ مرکزی لندن میں اپنے مقررہ راستہ سے گزر رہا تھا ۔ دریں اثنا مجھے اپنے موبائل کیمرہ کے ذریعے کچھ تصاویر بنانے کا موقع مل گیا ۔ اتفاق سے وہ تصاویر ابھی بھی میرے پاس محفوظ تھیں۔ آپ کے تھریڈکی مناسبت سے سوچا آپ لوگوں سے شئیرکر دوں





  6. #5
    Durre Nayab's Avatar
    Durre Nayab is offline Genius Member
    Edit>
     
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Karachi
    Posts
    2,094
    Blog Entries
    5
    Quoted
    757 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    EDL basically are thugs n drunks even brits hate them.

  7. #6
    PakistanZindaabaad is offline Expert Member
    sick of pti bullies
     
    Join Date
    Aug 2009
    Posts
    3,312
    Quoted
    605 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by dob4die View Post
    واقعی یہ ایک اچھی خبر نہیں مگر ابھی بھی حالات اس نہج پر نہیں پہنچے کہ سب برا سمجھ لیا جاۓ ۔ مجھے کچھ عرصہ پہلے اتفاقی طور پر ایک ایسے جلوس کا سامنا کرنا پڑا جو اوپر بیان کے گئے لوگوں کی شدید مذمت کر رہا تھا ۔ اچھا پہلو یہ تھا کہ اسمیں گوروں کی تعداد مسلمانوں سے زیادہ تھی ۔ اور یہ کافی بڑا جلوس تھا جو کہ مرکزی لندن میں اپنے مقررہ راستہ سے گزر رہا تھا ۔ دریں اثنا مجھے اپنے موبائل کیمرہ کے ذریعے کچھ تصاویر بنانے کا موقع مل گیا ۔ اتفاق سے وہ تصاویر ابھی بھی میرے پاس محفوظ تھیں۔ آپ کے تھریڈکی مناسبت سے سوچا آپ لوگوں سے شئیرکر دوں




    Yaha par to aik banner par love Music likha hua hay......... Humaray log us may kaisay shamil hosaktay hay??? "sarcasm off"

    BTW kubhi apni munjhi thalay bhi daang pher liya karo, humaray log England may 4 nasal may daakhil ho gaey hay aur abhi tuk sub say pichay hay hur cheez may, waha kay elections kay faislay Azad Kashmir may ho rahay hotay hay to kiya humaray logo ko woh SIR PAY BIHAY??? Apni halat to dekho pehlay....
    سات برس بعد کا لندن


    وسعت اللہ خان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام،




    آخری وقت اشاعت: اتوار 1 اپريل 2012 ,* 07:48 GMT 12:48 PST




    لندن کی ایک اور خوبی بھی ہے، آپ بھلے سات برس بعد جائیں یا ستر برس بعد، ہر عمارت کا ظاہر جُوں کا تُوں ملے گا بھلے باطن کتنا ہی تبدیل ہوچکا ہو۔ اسی لئے لندن کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہاں آدمی راستہ تو بھول سکتا ہے گم نہیں ہوسکتا۔
    اگر سات برس بعد میں نے کچھ ظاہری تبدیلی محسوس کی تو بس یہ کہ سرکار پہلے کے مقابلے میں فلاحی کم اور کاروباری زیادہ ہوگئی ہے۔
    روزمرہ استعمال کی اشیاء اور ٹرانسپورٹ دوگنی مہنگی ہوگئی ہے۔ اولمپکس چونکہ سر پر ہیں لہذٰا ہر اہم شاہراہ اور چوک پر بڑی بڑی مرمتی مشینیں اور حفاظتی ہیٹ پہنے مزدور کھدائی، بھرائی، چنائی میں لگے ہوئے ہیں۔ بالخصوص مشرقی لندن کے پسماندہ محلوں کی قسمت جاگ گئی ہے۔ بیکار میدانوں میں کنکریٹ، لوہے اور شیشے کے رہائشی و کاروباری ڈھانچے کھڑے ہوگئے ہیں۔ سڑکوں کو ڈامر کی نئی وردی پہنا دی گئی ہے اور پولیس کا گشت پہلے سے بڑھ گیا ہے۔
    ایشین کارنر شاپس ہمیشہ کی طرح وقت کے کیپسول میں منجمد ہیں۔ وہاں آج بھی ساٹھ اور ستر کی دہائی کے محمد رفیع اور لتا منگیشکر کا راج ہے۔
    معیشت کی سخت گیری نے تارکینِ وطن کی میزبانی کے قوانین کو سخت تر کردیا ہے۔ سات جولائی دو ہزار پانچ کو لندن میں جو بم دھماکے ہوئے ان کے سماجی و نفسیاتی اثرات سات برس گذرنے کے باوجود گہرے ہیں۔
    گھیٹو مینٹلٹی

    ان لوگوں کا خیال تھا کہ الگ تھلگ رہنے سے نا تو بیرونی دنیا سے واسطہ ہوگا اور نا ہی ان کے عقائد و خیالات کو کوئی چیلنج درپیش ہوگا اور پھر وہ لاشعوری طور پر اپنے اندر ہی اندر گھستے چلے گئے۔ اس رویے نے انگریزی زبان کو گھیٹو مینٹلٹی کی اصطلاح عطا کی۔




    بظاہر حکومت نسلی اقلیتوں کو بڑے سماجی دھارے کا حصہ بنانے کی کوششیں کررہی ہے۔ پھر بھی بے اعتمادی سے پھوٹنے والے عدمِ تحفظ کا احساس کم ہوتا دکھائی نہیں پڑتا۔ بقول ایک مقامی ایشین صحافی ’ کچھ پتہ نہیں کون کس کے لئے کام کررہا ہے اور کون کسی کی نگرانی کررہا ہے ۔‘
    نتیجہ یہ ہے کہ نسلی اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں میں اپنی جڑوں اور شناخت کی تلاش و مراجعت اور اس شناخت کے ساتھ اکثریتی دھارے میں رہنے کی کچی پکی کوششوں نے ایک پیچیدہ نفسیاتی و سماجی شکل اخیتار کرلی ہے۔
    مثلاً جب میں نے جولائی دو ہزار پانچ میں لندن چھوڑا تو اس وقت تک حلال و حرام کی بحث صرف گوشت اور سودی کاروبار کے گرد گھومتی تھی۔گوشت پر حلال فوڈ اتھارٹی کی مہر لگتی تھی اور بینکوں نے بلاسودی قرضوں کی سکیمیں شروع کردی تھیں۔
    لیکن سات برس کے وقفے سے لندن میں پرانے دوستوں اور ان کے اہل ِ خانہ سے مل کر احساس ہوا کہ سماجی و نفسیاتی بے یقینی کے خلا کو دیگر بقائی مباحثوں کے ساتھ ساتھ حلال و حرام کی بحث نے بھی شدت سے لپیٹ میں لے لیا ہے۔ جیسے ایک صاحب نے اپنی صاحبزادی کے اصرار پر بہترین لیدر صوفہ اس لئے بیچ دیا کیونکہ صاحبزادی کو ایک دن شبہہ ہوگیا کہ اس کا چمڑا حلال نہیں۔ اسے یہ دلیل بھی قائل نا کرسکی کہ یہ چمڑا گائے کا ہے۔ صاحبزادی کا استدلال تھا کہ کیا ثبوت ہے کہ یہ مری ہوئی گائے کا چمڑا ہے یا زبیحہ گائے کا۔
    اسی طرح ایک پانچ چھ سالہ بچے کی والدہ نے بتایا کہ یہ سکول میں صرف وہ پنسلیں استعمال کرتا ہے جو حلال اتھارٹی سے منظور شدہ ہوں۔ ایک بچے کا خیال تھا کہ گوری لڑکیوں سے بات کرنا حلال عمل نہیں۔ ایک خاتون میک اپ کا وہ سامان استعمال کرتی ہیں جس کے بارے میں حلال پروڈکٹ کا سرٹیفکیٹ جاری کرنے والے کئی اداروں میں سے صرف ایک مخصوص ادارے نے سند جاری کی ہو۔
    مجھے اکثر دوستوں سے مل کے بار بار وہ یورپی یہودی کمیونٹیز یاد آتی رہیں جنہوں نے خود کو اکثریت کے ہاتھوں مذہبی، سیاسی، سماجی و نفسیاتی محصور سمجھتے ہوئے تقریباً ہزار برس قبل بڑے بڑے شہروں میں خود کو مخصوص (گھیٹوز) محلوں میں محصور کرلیا۔ ان کا خیال تھا کہ الگ تھلگ رہنے سے نا تو بیرونی دنیا سے واسطہ ہوگا اور نا ہی ان کے عقائد و خیالات کو کوئی چیلنج درپیش ہوگا اور پھر وہ لاشعوری طور پر اپنے اندر ہی اندر گھستے چلے گئے (اس رویے نے انگریزی زبان کو گھیٹو مینٹلٹی کی اصطلاح عطا کی)۔
    اگرچہ دوسری عالمی جنگ نے مغربی دنیا کی حد تک گھیٹو زہنیت کی جڑیں ہلا دیں مگر پھر ایک بڑا سا جدید گھیٹو اسرائیل کی شکل میں وجود میں آگیا۔
    کہنے کا مقصد یہ ہے کہ شناخت برقرار رکھنا ہر نسلی و مذہبی گروہ کا بنیادی حق ہے لیکن چہرہ بچاتے بچاتے بے چہرہ ہوجانا کون سی عقلمندی ہے۔







    MUJHAY LUGTA HAY KAY EUROPEAN MUSALMANO KO BHI YAHOODIYO KI TARAH AIK NASAL KUSHI SAY GUZARNA HO GA IS GHETTO SAY NIKALNAY KAY LIYE.... (NAUZUBILLAH)

    @DengueNumber1 yeh gangster shangster jo minority kay hotay hay na yeh aaj tuk kubhi bhi minority ko majority say nahi bucha paey hay.

    *BBC Urdu‬ - *ملٹی میڈیا‬ - *ویران مکانات:قتل و غارت گری کے گواہ‬
    دس برس سے اپنےگھر میں نہیں سوئے‘


    شکیل اختر
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام، احمدآباد




    آخری وقت اشاعت: جمعـء 2 مارچ 2012 ,* 13:49 GMT 18:49 PST


    گجرات فسادات میں ایک ہزار سے زیادہ لوگ مارے گئے تھے


    بھارت کی ریاست گجرات میں سنہ 2002 کے فسادات کے دس برس بعد بھی ریاست میں ہزاروں مسلمان اپنے گاؤں میں نہیں رہ سکتے ہیں۔ گودھرا سے اسّی کلومیٹر دور انجنوا ایسا ہی ایک گاؤں ہے جہاں مسلمان دن بھر اپنے اپنے گھروں میں رہ کر رات میں وہاں سے چلے جاتے ہیں۔
    گجرات میں سنہ 2002 کے فسادات میں سرکاری اعداد و شمار کے مطابق بارہ سو سے زیادہ لوگ مارے گئے تھے۔ ان ہلاکتوں کے علاوہ مسلمانوں کو معاشی تباہی کا بھی سامنا کرنا پڑا ہے۔
    انجنوا کے چاروں طرف مکئی اور گیہوں کی فصل لہلہا رہی ہے۔ حد نطر تک پوری زمین سبز نظر آتی ہے۔ دس برس قبل یہی دن تھے اور یہی موسم تھا۔ یہاں کے باشندے مل جل کر رہ رہے تھے کہ اچانک 2002 کے فسادات نے اس گاؤں کی دنیا بدل دی۔ فسادات کے دوران یہاں کے پندرہ مسلمانوں کو مار دیا گیا۔
    دس برس بعد بھی مسلمان یہاں رہنے کے لیے تیار نہیں ہیں۔ وہ دن میں یہاں آتے ہیں اور رات میں کہیں اور چلے جاتے ہیں۔
    فرزانہ اسی گاؤں میں رہتی تھیں۔ ان کا کہنا ہے ’دن میں ہم لوگ اپنا کام کر کے شام میں یہاں سے گودھرا چلے جائیں گے۔ یہاں بہت ڈر لگتا ہے۔‘
    کچھ ہی دوری پر شیخ عبدالرحیم ایک چار پائی پر بیٹھے ہیں اور اپنے کھیت کی طرف دیکھ رہے ہیں۔ فسادات میں ان کے تین بیٹے مارے گئے تھے۔ وہ کہتے ہیں ’ہمارا تو سب برباد ہو گیا۔ ہم سے سب لوٹ لیا۔ انسان بھی مر گیا۔ یہ سب مودی نے کرایا ہے۔ ہم تو پردیسی ہو گئے ہیں۔‘

    اس چھوٹے سے گاؤں میں مسلمانوں کی چھوٹی سی آبادی تھی۔ اب سبھی نے اپنی زمینیں ہندوؤں کو بٹائی میں پر دے دی ہیں۔ ہارون بھائی جیسے سبھی لوگ یہاں یہی کہتے ہیں کہ مسلمانوں کو ایک سیاسی سازش کے تحت تباہ کیا گیا۔ ’ہمیں ڈر لگتا ہے اور گھبراہٹ ہوتی ہے۔ ان لوگوں کا بھروسہ نہیں ہے۔ اس میں مودی کا ہاتھ ہے۔ سب اسی نے کرایا ہے۔‘
    مسلمانوں نے ہلاکتوں اور لوٹ مار کے سلسلے میں نامزد رپورٹیں درج کرائی تھیں۔ ان میں کچھ کو سزا بھی ہوئی لیکن بیشتر ملزمان الزامات سے بری ہو گئے۔
    منا بھائی اکبر بھائی شیخ کہتے ہیں یہ فسادات ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت کیے گئے تھے اور ان کا مقصد مسلمانوں کو اقتصادی طور پر تباہ کرنا ہے۔ ’ممبئی میں بم دھماکے ہوئے، دلی میں ہوئے، احمدآباد میں ہوئے۔ ہر جگہ محض شک کی بنیاد پر لوگوں کو دہشت گردی قانون کے تحت اندر کر دیا گیا۔ گجرات فسادات کے بارے میں سبھی کو معلوم ہے کہ یہ مودی نے کرایا لیکن اس کے خلاف ایک ایف آئی آر بھی درج نہیں ہو سکتی۔‘
    حقوق انسانی کے علمبردار اور سماجی کارکن فادر پرکاش سیڈرک کہتے ہیں کہ ریاست میں مودی کا خوف پھیلا ہوا ہے۔ ’یہاں کوئی سیکولر متحدہ اپوزیشن نہیں ہے جو سبھی کو فرقہ پرست عناصر کے خلاف متحد کر سکے۔‘
    اتنی بڑی تعداد میں ہلاکتوں اور بے گھر ہونے والوں کی حالت پر گجرات کا معاشرہ خاموش کیوں ہے؟ لوگ آگے کیوں نہیں آئے؟ سماجی کارکن ڈاکٹر سروپ کہتی ہیں ’گجرات کا متمول اور متوسط طبقہ صرف اپنے مفاد میں دلچسپی رکھتا ہے۔ جب تک اسے نقصان نہیں ہو گا وہ خاموش رہے گا۔‘
    معروف دانشور گریش پٹیل کہتے ہیں کہ گجرات کے معاشرے میں تشدد کسی نہ کسی شکل میں موجود رہا ہے اور پچھلے کچھ برس میں مسلمانوں کے خلاف نفرت کے جذبات میں کافی شدت آئی ہے۔ ’گجرات کا ووکل طبقہ تشدد پر خاموش رہا ہے۔ مسلمانون پر ہونے تشدد پر پورا معاشرہ خاموش رہا ہے یہ ایک حقیقت ہے۔‘
    گجرات میں گزرے ہوئے دس برس میں وزیر اعلیٰ نریندر مودی نے سیاسی افق پر نئی منزلین چھوئی ہیں۔ ایک برس کے اندر ہونے والے ریاستی اسمبلی کے انتخابات میں مودی کی فتح یقینی ہے۔ شاید اس کے بعد وہ ملک کی وزارت عظمیٰ کے بھی امیدوار ہوں۔
    لیکن گجرات کے مسلمانوں پر گزرے ہوئے دس برس کا ایک ایک لمحہ بھاری رہا ہے۔ وہ نہ صرف اقتصادی طور پر تباہ ہوئے بلکہ ان کی ایک بڑی تعداد بے گھر بھی ہو گئی ہے۔ ان گزرے ہوئے برسوں میں وہ اپنی بکھری ہوئی زندگی کو سمیٹنے کی کوشش کرتے رہے ہیں۔ مودی کے گجرات میں ان پر زندگی تنگ ہو گئی ہے ۔








  8. #7
    moazzamniaz is offline Expert Member
    A Normal Human Being with Most
    Common Flaws
     
    Join Date
    Dec 2009
    Location
    Ali Pur
    Posts
    13,023
    Quoted
    1146 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by PakistanZindaabaad View Post

    MUJHAY LUGTA HAY KAY EUROPEAN MUSALMANO KO BHI YAHOODIYO KI TARAH AIK NASAL KUSHI SAY GUZARNA HO GA IS GHETTO SAY NIKALNAY KAY LIYE.... (NAUZUBILLAH)
    مسلمانوں نے اپنی اصلاح کیلیے خدا سے نئے سرے سے سوا لاکھ (علیہمالسلام) کی مانگ کر دی

  9. #8
    Double Shah's Avatar
    Double Shah is offline ان شاء اللہ ، ان شاء اللہ
    Edit>
     
    Join Date
    Jun 2008
    Location
    London
    Posts
    1,912
    Quoted
    461 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by PakistanZindaabaad View Post
    Yaha par to aik banner par love Music likha hua hay......... Humaray log us may kaisay shamil hosaktay hay??? "sarcasm off"

    BTW kubhi apni munjhi thalay bhi daang pher liya karo, humaray log England may 4 nasal may daakhil ho gaey hay aur abhi tuk sub say pichay hay hur cheez may, waha kay elections kay faislay Azad Kashmir may ho rahay hotay hay to kiya humaray logo ko woh SIR PAY BIHAY??? Apni halat to dekho pehlay....

    معاف کیجئے گا میں سمجھ نہیں پایا آپ کیا کہنا چاہ رہے ہیں ۔ میں نے تو اپنی پوسٹ میں گوروں کی تعریف کی کہ ان میں سے اکثریت نے رواداری اور باہمی احترام برقرار رکھنے کا مطالبہ کیا۔ اور جہاں تک ہمارے لوگوں کا ان ممالک میں کردار کا تعلق ہے تو اس میں دنیا کی کسی بھی دوسری قوم کی طرح اچھے برے ، کامیاب و ناکام ہر طرح کے لوگ موجود ہیں ۔ کسی بھی غیر متعلق بات کو بنیاد بنا کرآپ نسلی تعصب ، فسطائیت اور مذہبی امتیاز کا جواز کیوں بنا رہے ہیں ؟؟ آپکا نقطہ سمجھ نہیں پایا

  10. #9
    STUNNER is offline Banned
    Good BY..!!
     
    Join Date
    Sep 2010
    Location
    Good By...!!!
    Posts
    6,322
    Blog Entries
    40
    Quoted
    888 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by PakistanZindaabaad View Post


    MUJHAY LUGTA HAY KAY EUROPEAN MUSALMANO KO BHI YAHOODIYO KI TARAH AIK NASAL KUSHI SAY GUZARNA HO GA IS GHETTO SAY NIKALNAY KAY LIYE.... (NAUZUBILLAH)


    nasal kushi to already ho rai hai poori dunia me musalmano kee ab or kitni nasal kushi karwau ge..........

  11. #10
    PakistanZindaabaad is offline Expert Member
    sick of pti bullies
     
    Join Date
    Aug 2009
    Posts
    3,312
    Quoted
    605 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by moazzamniaz View Post
    مسلمانوں نے اپنی اصلاح کیلیے خدا سے نئے سرے سے سوا لاکھ (علیہمالسلام) کی مانگ کر دی
    Allah SWT nay to Muhammad (SAWW) kay baad ban luga diya hay meray khayaal may MADE IN CHINA lanay parRay gay

    ---------- Post added at 12:09 AM ---------- Previous post was at 12:08 AM ----------

    Quote Originally Posted by dob4die View Post
    معاف کیجئے گا میں سمجھ نہیں پایا آپ کیا کہنا چاہ رہے ہیں ۔ میں نے تو اپنی پوسٹ میں گوروں کی تعریف کی کہ ان میں سے اکثریت نے رواداری اور باہمی احترام برقرار رکھنے کا مطالبہ کیا۔ اور جہاں تک ہمارے لوگوں کا ان ممالک میں کردار کا تعلق ہے تو اس میں دنیا کی کسی بھی دوسری قوم کی طرح اچھے برے ، کامیاب و ناکام ہر طرح کے لوگ موجود ہیں ۔ کسی بھی غیر متعلق بات کو بنیاد بنا کرآپ نسلی تعصب ، فسطائیت اور مذہبی امتیاز کا جواز کیوں بنا رہے ہیں ؟؟ آپکا نقطہ سمجھ نہیں پایا
    May jawaz nahi bana raha JAWAZ BATA RAHA HOO... (ghalat ya sahih). May munafiq nahi hoo meray bhai jo such hay meri nazar may woh keh diya, jub tuk humari minority majority kay saath hostile relationship rukhay gi, aisa hi hoga. Reh gai baat goro ki majority ki to agar humaray mulk may koi non Muslim 911, 77 ya phir haal hi may honay walay France kay dehshatgard humlo may mulawis ho to koi bhi zi shaoor insaan in kay saath nahi kharRa ho ga (i am sorry mugar Pakistan ka zikar kur diya jaha waisay hi koi kisi non Muslim kay saath kharRa nahi hota).

    ---------- Post added at 12:09 AM ---------- Previous post was at 12:09 AM ----------

    Quote Originally Posted by STUNNER View Post
    nasal kushi to already ho rai hai poori dunia me musalmano kee ab or kitni nasal kushi karwau ge..........
    Nasal kushi abhi dekhi hi kaha hay!!! Nasal kushi poochni ho to Africa walo say poocho, yahoodyo say poocho, ya phir Punjab say hijrat jinhoo nay ki thi partition may un say pooch lo.

  12. #11
    Durre Nayab's Avatar
    Durre Nayab is offline Genius Member
    Edit>
     
    Join Date
    Feb 2011
    Location
    Karachi
    Posts
    2,094
    Blog Entries
    5
    Quoted
    757 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    I think sare Europe mein British are the most tolerant society. UK me unemployment n crimes ka jo haal hei wo majority migrants n assylum seekers mei hi hei or inhi ki waja se crimes barh gae hei.inhin ki waja se economy crises mein he or in ki waja se hi public spending cut ki gai hei kiyunke ye log hi benefits per ji rahe hein kaam waam kuch nahin kerna or in logon ki waja se hi ye hate gangs ko ye moqa mil raha hei. Unfortunately in Asylum seekers n migrants ki bohot barhi tadad Musalmano ki hei.

  13. #12
    Double Shah's Avatar
    Double Shah is offline ان شاء اللہ ، ان شاء اللہ
    Edit>
     
    Join Date
    Jun 2008
    Location
    London
    Posts
    1,912
    Quoted
    461 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Durre Nayab STUNNER javeria romesa cancer miranda rotomia2002 __QanOOn__ moazzamniaz needoos suave zishi maxpk Abu_Abdullah innocent pari lexkhan
    Quote Originally Posted by PakistanZindaabaad View Post

    May jawaz nahi bana raha JAWAZ BATA RAHA HOO... (ghalat ya sahih). May munafiq nahi hoo meray bhai jo such hay meri nazar may woh keh diya, jub tuk humari minority majority kay saath hostile relationship rukhay gi, aisa hi hoga. Reh gai baat goro ki majority ki to agar humaray mulk may koi non Muslim 911, 77 ya phir haal hi may honay walay France kay dehshatgard humlo may mulawis ho to koi bhi zi shaoor insaan in kay saath nahi kharRa ho ga (i am sorry mugar Pakistan ka zikar kur diya jaha waisay hi koi kisi non Muslim kay saath kharRa nahi hota).

    میں آپ سے متفق ہوں بلکہ اس سے بھی کچھ آگے بڑھ کر کہہ رہا ہوں ۔ میں ان اقوام کو زیادہ تہذیب یافتہ ، تعلیم یافتہ اور متمدن سمجھتا ہوں ۔ تبھی تو ان سے اس معاملے میں مثبت کردار کی امید لگا رہا ہوں۔ تخیلاتی دنیا میں رہنے کا میں بھی قائل نہیں حتیٰ کہ ان ترقی یافتہ معاشروں سے ہمارا موازنہ کیا جانے کو ہی درست نہیں سمجھتا ۔ خود فریبی کیسی ۔ خود ساختہ احساسِ برتری مقصد کے حصول کے لئے درکار تیاری میں کوتاہی کا سبب بنتی ہے ۔ اور تیاری میں کوتاہی مقصد میں ناکامی۔ ؏ "عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی یہ خاکی اپنی فطرت میں نوری ہے نہ ناری ہے " ۔ عمل وجدوجہدسے کنارہ کشی اختیار کر کے احساسِ تفاخر و برتری کا شکار رہنا ایک نفسیاتی بیماری سے بڑھ کر کچھ بھی نہیں ۔ اصلاح کیطرف پہلا قدم ہی اپنا محاسبہ ہے ۔ اپنی غلطیوں ، کوتاہیوں اور کمیوں کا ادراک ۔ ہمیں بطورِ قوم آگے بڑھنے کے لئے اپنی نفسیات ، نظریات و جزئیات کا کُلی طور پر ازِسر نو جائزہ لینا پڑے گا ۔ اور جب تک ہم ایسا نہیں کر پاتے ہم پر یہ حالیہ فکری جمود طاری رہے گا ۔

    آپ نے ہمارے معاشرے میں جو عیب گنواۓ وہ ایک حقیقت ہیں اور اس باب میں کوئی دو راۓ نہیں کہ ہمارا معاشرہ انسانی قدروں سے خالی ہے ۔ یقیناً ہماری موجودہ حالت میں اگر کوئی غیر ملکی یا غیر مذہبی ٩/١١ یا 7 /7 یا کوئی اس قسم کی حرکت کا مرتکب ہوتا تو ہم اپنے ملک میں اس پورے گروہ کا جینا دو بھر کر دیتے ۔ نسبتاً ناخواندہ اور لاعلم معاشرے سے آپ اور توقع بھی کیا رکھتے ہیں ؟ لیکن مسائل کا حل کیا صرف خود کو کوسنے دینے یا تمسخر اڑانے میں رکھا ہے ؟ یا کہ سوچ بیچار کر کے کوئی رستہ نکالنے اور مثبت طرزِعمل میں ؟ خامیاں اور خوبیاں ہی کُل اَثاثہ ہوا کرتی ہیں ۔ دونوں ہی کا ادراک لازم تا کہ خامیوں سے بچنے کی تدبیر کی جاۓ جبکہ خوبیوں کو استعمال میں لا کر ناقص صورتحال سے نکلنے کا رستہ بنایا جاۓ
    ۔ مسٔلہ کا حل خامیوں سے روٹھ رہنا نہیں کہ یہ صرف نامیدی و احساسِ کمتری کو جنم دیتا ہے۔ جیسے مصنوعی احساسِ برتری تباہ کرتی ہے وہیں حد درجہ احساسِ کمتری بھی بربادی کیطرف ہی لیجاتی ہے ۔مسٔلہ کا حل توازن برقرار رکھنے میں ہے ۔خامیوں کی نشاندہی احسن عمل مگر جہاں بلا وجہ الزام تراشی ہو وہاں جرأت کے ساتھ اپنا مقدمہ پیش بھی کرنا چاہیےکہ بقا اسی میں ہے ۔احساسِ کمتری کا تو جواز ہی نہیں کیونکہ قومیں بنیادی طور پر لائق و نالائق ، اہل و نااہل نہیں ہوا کرتیں ۔ جو قومیں اچھے شعار اپنا لیتی ہیں وہ چھا جاتی ہیں ۔یہ صرف وقت کا پھیر ہے ۔ کبھی اہلِ یورپ ایک دوجے کی گردنیں مارتے اور مسلم ریاستیں نت نئی ایجادات کرتیں ۔ فلسفہ و نظریات پہ کھل کر بحث کا باقاعدہ اہتمام ہوا کرتا ۔ مگر افسوس ، پھر وہ بتدریج برے شعار اپناتی گئیں حتیٰ کہ زوال پذیر ہوئیں ۔ لیکن جب تاریکی میں ڈوبی ان مغربی اقوام نے اپنے حسنِ عمل پر جینا شروع کیا تو انکا کوئی ثانی نہ رہا ۔ اِن میں موجود خرد مند اور با شعور (آپ لوگوں جیسے پڑھے لکھے ) لوگوں نے باقی اجڈ، گنوار ، وحشی لوگوں کو سنوارنے میں اپنا مثبت کردار ادا کیا ۔ صرف پھبتیاں نہیں کسیں، نہ سدا عیب جوئی ۔ کوئی بھی نئی چیز سِکھانے کے ہنگام حوصلہ افزائی کی بڑی اہمیت ہوتی ہے ۔ سدا عیب جوئی کر کے ان میں یہ احساس اجاگر نہیں کیا جاتا کہ تم لاعلاج ہو چکے ۔

    یقیناً بجا فرمایا کہ اگر یہ لوگ ہمارے ملکوں میں ٩/١١ جیسے واقعات میں ملوث ہوں تو ہم کبھی انکے ساتھ کھڑے نہ ہوں ۔ لیکن تصویر کا دوسرا رخ بھی دیکھئے ۔ فرض کیجئے ہم لوگ انکے ممالک میں انہی کیطرح عراق میں دس لاکھ لوگوں کو قتل کر دیں ، بوسنیا میں خالص مذہب کی بنیاد پرنسل کشی کی مہم برپا کریں، فلسطین میں قتل و غارت گری ، ناجائز قبضہ کی حمایت جاری رکھیں اور پھر افغانستان میں ہزاروں لوگوں کو اپنے سیاسی مفادات کے پیشِ نظر موت کے گھاٹ اتار دیں اور لاکھوں کو اپاہج بنا دیں (فہرست اس سےکافی طویل ہے ) تو کیا یہ ہمارے ساتھ کھڑے ہونگے ؟ سپلائی لائن کی بحالی تو کجا کیا ہم سے کوئی ہاتھ ملانا بھی پسند کرے گے ؟ لیکن اسکے باوجود آج بھی مسلمانوں کی اکثریت مغرب کے ساتھ آسودہ تعلقات کی خواہاں ہے ۔ دنیا کے کسی بھی فورم پر سروے کروا لیں ۔ اگر اسکی قدرت نہیں رکھتے تو ذاتی طور پر اپنے ارد گرد لوگوں سےہی پوچھ لیں گر چہ ایسے سروے نتائج پہلے سے موجود ہیں ۔تو پھر صرف اقلیت کی بنا پر طعنہ زنی ؟ جبکہ اگر انکی اکثریت ، اقلیت کے نفرت آمیز عمل کو رد کرتی ہے تو ہم تحسین کا برملا اظہار کرتے ہیں اور اقلیت کے اس عمل کو طعنہ زنی کا جواز بنانے سے روکتے ہیں (اس فورم اور تھریڈ کی مثال ہی لے لیں ) ۔
    نِرا تنقید و بیزاری کا اعلان کر کے ہم نا دانستہ طورپر
    مسٔلہ میں اضافہ کا باعث ہی بنتے ہیں، حل کا حصہ ہرگز نہیں ۔ہمیں اپنے طرزِعمل کو متوازن کرنا ہو گا ۔ اپنے مسائل کا حل اپنے ہی دماغ سے پھوٹے گا ۔ دوسروں کے نہیں اپنے دماغ سے ہی سوچنا ہے تا کہ اپنے مسائل کو بخوبی سمجھ سکیں اور خود کو مرعوبیت کی دلدل میں پھنسنے سے بھی بچا سکیں ۔ کہتے ہیں غلام جب آقا کے ذہن سے سوچنا شروع کر دے تو آزادی کی تمام امیدیں دم توڑ دیتی ہیں !! ا

    خواجگی میں کوئی مشکل نہیں رہتی باقی
    پختہ ہو جاتے ہیں جب خوۓ غلامی میں غلام


  14. #13
    needoos is offline Banned
    Allah's slave, friend of
    friends and sword to western
    boot licker punks
     
    Join Date
    Oct 2008
    Location
    UK
    Posts
    7,523
    Quoted
    1558 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by dob4die View Post
    @Durre Nayab @STUNNER @javeria @romesa @cancer @miranda @rotomia2002 @__QanOOn__ @moazzamniaz @needoos @suave @zishi @maxpk @Abu_Abdullah @innocent pari @lexkhan

    میں آپ سے متفق ہوں بلکہ اس سے بھی کچھ آگے بڑھ کر کہہ رہا ہوں ۔ میں ان اقوام کو زیادہ تہذیب یافتہ ، تعلیم یافتہ اور متمدن سمجھتا ہوں ۔ تبھی تو ان سے اس معاملے میں مثبت کردار کی امید لگا رہا ہوں۔ تخیلاتی دنیا میں رہنے کا میں بھی قائل نہیں حتیٰ کہ ان ترقی یافتہ معاشروں سے ہمارا موازنہ کیا جانے کو ہی درست نہیں سمجھتا ۔ خود فریبی کیسی ۔ خود ساختہ احساسِ برتری مقصد کے حصول کے لئے درکار تیاری میں کوتاہی کا سبب بنتی ہے ۔ اور تیاری میں کوتاہی مقصد میں ناکامی۔ ؏ "عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی یہ خاکی اپنی فطرت میں نوری ہے نہ ناری ہے " ۔ عمل وجدوجہدسے کنارہ کشی اختیار کر کے احساسِ تفاخر و برتری کا شکار رہنا ایک نفسیاتی بیماری سے بڑھ کر کچھ بھی نہیں ۔ اصلاح کیطرف پہلا قدم ہی اپنا محاسبہ ہے ۔ اپنی غلطیوں ، کوتاہیوں اور کمیوں کا ادراک ۔ ہمیں بطورِ قوم آگے بڑھنے کے لئے اپنی نفسیات ، نظریات و جزئیات کا کُلی طور پر ازِسر نو جائزہ لینا پڑے گا ۔ اور جب تک ہم ایسا نہیں کر پاتے ہم پر یہ حالیہ فکری جمود طاری رہے گا ۔

    آپ نے ہمارے معاشرے میں جو عیب گنواۓ وہ ایک حقیقت ہیں اور اس باب میں کوئی دو راۓ نہیں کہ ہمارا معاشرہ انسانی قدروں سے خالی ہے ۔ یقیناً ہماری موجودہ حالت میں اگر کوئی غیر ملکی یا غیر مذہبی ٩/١١ یا 7 /7 یا کوئی اس قسم کی حرکت کا مرتکب ہوتا تو ہم اپنے ملک میں اس پورے گروہ کا جینا دو بھر کر دیتے ۔ نسبتاً ناخواندہ اور لاعلم معاشرے سے آپ اور توقع بھی کیا رکھتے ہیں ؟ لیکن مسائل کا حل کیا صرف خود کو کوسنے دینے یا تمسخر اڑانے میں رکھا ہے ؟ یا کہ سوچ بیچار کر کے کوئی رستہ نکالنے اور مثبت طرزِعمل میں ؟ خامیاں اور خوبیاں ہی کُل اَثاثہ ہوا کرتی ہیں ۔ دونوں ہی کا ادراک لازم تا کہ خامیوں سے بچنے کی تدبیر کی جاۓ جبکہ خوبیوں کو استعمال میں لا کر ناقص صورتحال سے نکلنے کا رستہ بنایا جاۓ
    ۔ مسٔلہ کا حل خامیوں سے روٹھ رہنا نہیں کہ یہ صرف نامیدی و احساسِ کمتری کو جنم دیتا ہے۔ جیسے مصنوعی احساسِ برتری تباہ کرتی ہے وہیں حد درجہ احساسِ کمتری بھی بربادی کیطرف ہی لیجاتی ہے ۔مسٔلہ کا حل توازن برقرار رکھنے میں ہے ۔خامیوں کی نشاندہی احسن عمل مگر جہاں بلا وجہ الزام تراشی ہو وہاں جرأت کے ساتھ اپنا مقدمہ پیش بھی کرنا چاہیےکہ بقا اسی میں ہے ۔احساسِ کمتری کا تو جواز ہی نہیں کیونکہ قومیں بنیادی طور پر لائق و نالائق ، اہل و نااہل نہیں ہوا کرتیں ۔ جو قومیں اچھے شعار اپنا لیتی ہیں وہ چھا جاتی ہیں ۔یہ صرف وقت کا پھیر ہے ۔ کبھی اہلِ یورپ ایک دوجے کی گردنیں مارتے اور مسلم ریاستیں نت نئی ایجادات کرتیں ۔ فلسفہ و نظریات پہ کھل کر بحث کا باقاعدہ اہتمام ہوا کرتا ۔ مگر افسوس ، پھر وہ بتدریج برے شعار اپناتی گئیں حتیٰ کہ زوال پذیر ہوئیں ۔ لیکن جب تاریکی میں ڈوبی ان مغربی اقوام نے اپنے حسنِ عمل پر جینا شروع کیا تو انکا کوئی ثانی نہ رہا ۔ اِن میں موجود خرد مند اور با شعور (آپ لوگوں جیسے پڑھے لکھے ) لوگوں نے باقی اجڈ، گنوار ، وحشی لوگوں کو سنوارنے میں اپنا مثبت کردار ادا کیا ۔ صرف پھبتیاں نہیں کسیں، نہ سدا عیب جوئی ۔ کوئی بھی نئی چیز سِکھانے کے ہنگام حوصلہ افزائی کی بڑی اہمیت ہوتی ہے ۔ سدا عیب جوئی کر کے ان میں یہ احساس اجاگر نہیں کیا جاتا کہ تم لاعلاج ہو چکے ۔

    یقیناً بجا فرمایا کہ اگر یہ لوگ ہمارے ملکوں میں ٩/١١ جیسے واقعات میں ملوث ہوں تو ہم کبھی انکے ساتھ کھڑے نہ ہوں ۔ لیکن تصویر کا دوسرا رخ بھی دیکھئے ۔ فرض کیجئے ہم لوگ انکے ممالک میں انہی کیطرح عراق میں دس لاکھ لوگوں کو قتل کر دیں ، بوسنیا میں خالص مذہب کی بنیاد پرنسل کشی کی مہم برپا کریں، فلسطین میں قتل و غارت گری ، ناجائز قبضہ کی حمایت جاری رکھیں اور پھر افغانستان میں ہزاروں لوگوں کو اپنے سیاسی مفادات کے پیشِ نظر موت کے گھاٹ اتار دیں اور لاکھوں کو اپاہج بنا دیں (فہرست اس سےکافی طویل ہے ) تو کیا یہ ہمارے ساتھ کھڑے ہونگے ؟ سپلائی لائن کی بحالی تو کجا کیا ہم سے کوئی ہاتھ ملانا بھی پسند کرے گے ؟ لیکن اسکے باوجود آج بھی مسلمانوں کی اکثریت مغرب کے ساتھ آسودہ تعلقات کی خواہاں ہے ۔ دنیا کے کسی بھی فورم پر سروے کروا لیں ۔ اگر اسکی قدرت نہیں رکھتے تو ذاتی طور پر اپنے ارد گرد لوگوں سےہی پوچھ لیں گر چہ ایسے سروے نتائج پہلے سے موجود ہیں ۔تو پھر صرف اقلیت کی بنا پر طعنہ زنی ؟ جبکہ اگر انکی اکثریت ، اقلیت کے نفرت آمیز عمل کو رد کرتی ہے تو ہم تحسین کا برملا اظہار کرتے ہیں اور اقلیت کے اس عمل کو طعنہ زنی کا جواز بنانے سے روکتے ہیں (اس فورم اور تھریڈ کی مثال ہی لے لیں ) ۔
    نِرا تنقید و بیزاری کا اعلان کر کے ہم نا دانستہ طورپر
    مسٔلہ میں اضافہ کا باعث ہی بنتے ہیں، حل کا حصہ ہرگز نہیں ۔ہمیں اپنے طرزِعمل کو متوازن کرنا ہو گا ۔ اپنے مسائل کا حل اپنے ہی دماغ سے پھوٹے گا ۔ دوسروں کے نہیں اپنے دماغ سے ہی سوچنا ہے تا کہ اپنے مسائل کو بخوبی سمجھ سکیں اور خود کو مرعوبیت کی دلدل میں پھنسنے سے بھی بچا سکیں ۔ کہتے ہیں غلام جب آقا کے ذہن سے سوچنا شروع کر دے تو آزادی کی تمام امیدیں دم توڑ دیتی ہیں !! ا

    خواجگی میں کوئی مشکل نہیں رہتی باقی
    پختہ ہو جاتے ہیں جب خوۓ غلامی میں غلام

    Just want to add something in this beautiful analysis

    "Western societies have exceled in science and technologies, we should learn those skills from them as they have learnt those from our forefathers years ago. But not everything in WEST is perfect, woh kehtee hain ke SAANP ko DAIKH kar uss se SARDI mein BACHNEY ka tareeka tou SEEKHOO laikan HUD SAANP na ban jaao". Western Democracies gave 2 world wars and millions of deaths! Still most of western researchers have 2 different views on 9/11 and 7/7, apni KAMZOORI ko tou discuss karnaa chahiya LAIKAN uss KAMZOORI pe phabti kasnaa ya DHOOL peetana kahan ka INSAAF hai! Societies learn from time and experience, our downfall being started years ago, but we have hope and faith in ALLAH. InshALLAH by knowing our mistakes one day we shall overcome those.

    West sirf SCIENCE aur technology pe fakhar kar saktaa hai, and that is their right. OTHER than that what else they have to proud on. We should learn sceinces from them but having inferriorty complex shouldn't accept everything coming from there!

  15. #14
    PakistanZindaabaad is offline Expert Member
    sick of pti bullies
     
    Join Date
    Aug 2009
    Posts
    3,312
    Quoted
    605 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by dob4die View Post
    @Durre Nayab @STUNNER @javeria @romesa @cancer @miranda @rotomia2002 @__QanOOn__ @moazzamniaz @needoos @suave @zishi @maxpk @Abu_Abdullah @innocent pari @lexkhan

    میں آپ سے متفق ہوں بلکہ اس سے بھی کچھ آگے بڑھ کر کہہ رہا ہوں ۔ میں ان اقوام کو زیادہ تہذیب یافتہ ، تعلیم یافتہ اور متمدن سمجھتا ہوں ۔ تبھی تو ان سے اس معاملے میں مثبت کردار کی امید لگا رہا ہوں۔ تخیلاتی دنیا میں رہنے کا میں بھی قائل نہیں حتیٰ کہ ان ترقی یافتہ معاشروں سے ہمارا موازنہ کیا جانے کو ہی درست نہیں سمجھتا ۔ خود فریبی کیسی ۔ خود ساختہ احساسِ برتری مقصد کے حصول کے لئے درکار تیاری میں کوتاہی کا سبب بنتی ہے ۔ اور تیاری میں کوتاہی مقصد میں ناکامی۔ ؏ "عمل سے زندگی بنتی ہے جنت بھی جہنم بھی یہ خاکی اپنی فطرت میں نوری ہے نہ ناری ہے " ۔ عمل وجدوجہدسے کنارہ کشی اختیار کر کے احساسِ تفاخر و برتری کا شکار رہنا ایک نفسیاتی بیماری سے بڑھ کر کچھ بھی نہیں ۔ اصلاح کیطرف پہلا قدم ہی اپنا محاسبہ ہے ۔ اپنی غلطیوں ، کوتاہیوں اور کمیوں کا ادراک ۔ ہمیں بطورِ قوم آگے بڑھنے کے لئے اپنی نفسیات ، نظریات و جزئیات کا کُلی طور پر ازِسر نو جائزہ لینا پڑے گا ۔ اور جب تک ہم ایسا نہیں کر پاتے ہم پر یہ حالیہ فکری جمود طاری رہے گا ۔

    آپ نے ہمارے معاشرے میں جو عیب گنواۓ وہ ایک حقیقت ہیں اور اس باب میں کوئی دو راۓ نہیں کہ ہمارا معاشرہ انسانی قدروں سے خالی ہے ۔ یقیناً ہماری موجودہ حالت میں اگر کوئی غیر ملکی یا غیر مذہبی ٩/١١ یا 7 /7 یا کوئی اس قسم کی حرکت کا مرتکب ہوتا تو ہم اپنے ملک میں اس پورے گروہ کا جینا دو بھر کر دیتے ۔ نسبتاً ناخواندہ اور لاعلم معاشرے سے آپ اور توقع بھی کیا رکھتے ہیں ؟ لیکن مسائل کا حل کیا صرف خود کو کوسنے دینے یا تمسخر اڑانے میں رکھا ہے ؟ یا کہ سوچ بیچار کر کے کوئی رستہ نکالنے اور مثبت طرزِعمل میں ؟ خامیاں اور خوبیاں ہی کُل اَثاثہ ہوا کرتی ہیں ۔ دونوں ہی کا ادراک لازم تا کہ خامیوں سے بچنے کی تدبیر کی جاۓ جبکہ خوبیوں کو استعمال میں لا کر ناقص صورتحال سے نکلنے کا رستہ بنایا جاۓ
    ۔ مسٔلہ کا حل خامیوں سے روٹھ رہنا نہیں کہ یہ صرف نامیدی و احساسِ کمتری کو جنم دیتا ہے۔ جیسے مصنوعی احساسِ برتری تباہ کرتی ہے وہیں حد درجہ احساسِ کمتری بھی بربادی کیطرف ہی لیجاتی ہے ۔مسٔلہ کا حل توازن برقرار رکھنے میں ہے ۔خامیوں کی نشاندہی احسن عمل مگر جہاں بلا وجہ الزام تراشی ہو وہاں جرأت کے ساتھ اپنا مقدمہ پیش بھی کرنا چاہیےکہ بقا اسی میں ہے ۔احساسِ کمتری کا تو جواز ہی نہیں کیونکہ قومیں بنیادی طور پر لائق و نالائق ، اہل و نااہل نہیں ہوا کرتیں ۔ جو قومیں اچھے شعار اپنا لیتی ہیں وہ چھا جاتی ہیں ۔یہ صرف وقت کا پھیر ہے ۔ کبھی اہلِ یورپ ایک دوجے کی گردنیں مارتے اور مسلم ریاستیں نت نئی ایجادات کرتیں ۔ فلسفہ و نظریات پہ کھل کر بحث کا باقاعدہ اہتمام ہوا کرتا ۔ مگر افسوس ، پھر وہ بتدریج برے شعار اپناتی گئیں حتیٰ کہ زوال پذیر ہوئیں ۔ لیکن جب تاریکی میں ڈوبی ان مغربی اقوام نے اپنے حسنِ عمل پر جینا شروع کیا تو انکا کوئی ثانی نہ رہا ۔ اِن میں موجود خرد مند اور با شعور (آپ لوگوں جیسے پڑھے لکھے ) لوگوں نے باقی اجڈ، گنوار ، وحشی لوگوں کو سنوارنے میں اپنا مثبت کردار ادا کیا ۔ صرف پھبتیاں نہیں کسیں، نہ سدا عیب جوئی ۔ کوئی بھی نئی چیز سِکھانے کے ہنگام حوصلہ افزائی کی بڑی اہمیت ہوتی ہے ۔ سدا عیب جوئی کر کے ان میں یہ احساس اجاگر نہیں کیا جاتا کہ تم لاعلاج ہو چکے ۔

    یقیناً بجا فرمایا کہ اگر یہ لوگ ہمارے ملکوں میں ٩/١١ جیسے واقعات میں ملوث ہوں تو ہم کبھی انکے ساتھ کھڑے نہ ہوں ۔ لیکن تصویر کا دوسرا رخ بھی دیکھئے ۔ فرض کیجئے ہم لوگ انکے ممالک میں انہی کیطرح عراق میں دس لاکھ لوگوں کو قتل کر دیں ، بوسنیا میں خالص مذہب کی بنیاد پرنسل کشی کی مہم برپا کریں، فلسطین میں قتل و غارت گری ، ناجائز قبضہ کی حمایت جاری رکھیں اور پھر افغانستان میں ہزاروں لوگوں کو اپنے سیاسی مفادات کے پیشِ نظر موت کے گھاٹ اتار دیں اور لاکھوں کو اپاہج بنا دیں (فہرست اس سےکافی طویل ہے ) تو کیا یہ ہمارے ساتھ کھڑے ہونگے ؟ سپلائی لائن کی بحالی تو کجا کیا ہم سے کوئی ہاتھ ملانا بھی پسند کرے گے ؟ لیکن اسکے باوجود آج بھی مسلمانوں کی اکثریت مغرب کے ساتھ آسودہ تعلقات کی خواہاں ہے ۔ دنیا کے کسی بھی فورم پر سروے کروا لیں ۔ اگر اسکی قدرت نہیں رکھتے تو ذاتی طور پر اپنے ارد گرد لوگوں سےہی پوچھ لیں گر چہ ایسے سروے نتائج پہلے سے موجود ہیں ۔تو پھر صرف اقلیت کی بنا پر طعنہ زنی ؟ جبکہ اگر انکی اکثریت ، اقلیت کے نفرت آمیز عمل کو رد کرتی ہے تو ہم تحسین کا برملا اظہار کرتے ہیں اور اقلیت کے اس عمل کو طعنہ زنی کا جواز بنانے سے روکتے ہیں (اس فورم اور تھریڈ کی مثال ہی لے لیں ) ۔
    نِرا تنقید و بیزاری کا اعلان کر کے ہم نا دانستہ طورپر
    مسٔلہ میں اضافہ کا باعث ہی بنتے ہیں، حل کا حصہ ہرگز نہیں ۔ہمیں اپنے طرزِعمل کو متوازن کرنا ہو گا ۔ اپنے مسائل کا حل اپنے ہی دماغ سے پھوٹے گا ۔ دوسروں کے نہیں اپنے دماغ سے ہی سوچنا ہے تا کہ اپنے مسائل کو بخوبی سمجھ سکیں اور خود کو مرعوبیت کی دلدل میں پھنسنے سے بھی بچا سکیں ۔ کہتے ہیں غلام جب آقا کے ذہن سے سوچنا شروع کر دے تو آزادی کی تمام امیدیں دم توڑ دیتی ہیں !! ا

    خواجگی میں کوئی مشکل نہیں رہتی باقی
    پختہ ہو جاتے ہیں جب خوۓ غلامی میں غلام

    Bhai meray konsa hul aur kaisa hul??? ! karor baari hul bataya is kay baad bhi poocho kay hul kiya hay to yeh to sir deeewar say takranay wali baat hui. Saari batay chorRo kubhi suna hay kay koi kahay Indian Congress Party of USA ya phir BJP of London??? Mugar humaray logo ko dekho PPP (NY), PMLN (USA), PTI (USA). woh aik muhawara hay na kay you can take a pig out of the mud, but you cant take mud out of a pig wali misaal poori fit bethati hay humaray logo par. Aaj Indian hona aik fakhar ka maqam bun gaya hay, pehli baat jo logo kay zehno may aati hay Indian sun kay woh hoti hay kay INDIANS ARE SMART PEOPLE may nay nahi kaha meray aik Dominican coworker nay yeh baat ahi thi jis ko America aaey freaking saal bhi nahi hua tha. Aur agar Pakistan ki baat karo to dehshatgard aur low iq mentality level scum of the earth sumajhtay hay, meray samnay aik Irish American say aik aur dost nay poocha us ki beti kisi Pakistani kay saath shadi kur rahi hay woh kehta hay "Oh No thanks God NO", its not important what i said cause he didnt know i was Pakistani. Molvi sahib aik kehtay kay yahood o hanood o nisara kay sath dosti nahi kurna, mugar molvi sahib ka apna transplanted dil kis ka tha yeh un ko nahi maloom tha. bahar mojood 4 pakistaniyo ko pakarR lo 3 tumhay ushi mulk ko jis may woh kharRay hay galiya detay sunai daygay. Door kyu jatay ho forum ko hi dekh lo, haan koi agar Saudia say ho, qatar say ho, abu dhabi say ho ya phir dubai say haram hay us mulk kay baray may (jaha woh LEGALLY aik 3rd grade resident hay kay citizenship to woh detay hi nahi humaray Masakeen ko 100 baar bhi waha jum jaey) aik buri baat bhi kahay.
    Reh gai baat falestine aur israel ki to bhai woh aik ghetto hay. Woh mera masla nahi hay, hum nay usay kufar aur islam ki jung bana kur us ki maa behan kur dali hay. Reh gai baat Iraq ki to kashmir kay charar shareef walay peer sahib ki hikayat thi kay jub museebat asman say aati hay to woh Ghareeb kay ghar sub say pehlay rahaish rukhti hay.
    Bosnia ka masla aaj ka nahi sainkrRo saalo ka masla tha, Albanian nasal ko bohot arsay say Eastern Europe may log napasand kurtay thay, un ki Turkey say wafadari ki wajah say. May genocide ki wajah nahi bana raha aik wajah bata raha hoo, sub say barRi wajah to un ki jurm-e-zaifi hi tehri.

    Chalo yaar ab history lesson bus.
    Moral of the story ASAAN LUFZON MAY "MUNAFIQAT CHORrO AUR GHETTO MENTALITY SAY BAHIR AAO".

    ---------- Post added at 08:32 PM ---------- Previous post was at 08:20 PM ----------

    Quote Originally Posted by needoos View Post
    Just want to add something in this beautiful analysis

    "Western societies have exceled in science and technologies, we should learn those skills from them as they have learnt those from our forefathers years ago. But not everything in WEST is perfect, woh kehtee hain ke SAANP ko DAIKH kar uss se SARDI mein BACHNEY ka tareeka tou SEEKHOO laikan HUD SAANP na ban jaao". Western Democracies gave 2 world wars and millions of deaths! Still most of western researchers have 2 different views on 9/11 and 7/7, apni KAMZOORI ko tou discuss karnaa chahiya LAIKAN uss KAMZOORI pe phabti kasnaa ya DHOOL peetana kahan ka INSAAF hai! Societies learn from time and experience, our downfall being started years ago, but we have hope and faith in ALLAH. InshALLAH by knowing our mistakes one day we shall overcome those.

    West sirf SCIENCE aur technology pe fakhar kar saktaa hai, and that is their right. OTHER than that what else they have to proud on. We should learn sceinces from them but having inferriorty complex shouldn't accept everything coming from there!
    Yar mujhay yeh muntaq nahi sumajh may aai kay "unhoo nay hum say seekha" Yeh Rome aur Greece MashaAllah Baghdaad may thay? Ya Duniya !st Hijri say shuroo hui thi??? Reh gai baat sirf science and technology waali, aur humaray paas baqi sub kuch hay to yeh bhi aik jhoot hay, kay 10000 may Quran pay jhoothi qasam uthanay wala aap ko mil jata hay, zara West may dhoondho in ko, to log pagal khanay may bund kur day gay. Meray cousin nay 5 bundo ko beech bazar may qatal kiya aur us kay ghar walo nay wakeel nahi bulkay judge kur liya. Kiya baat kurtay ho...... Humaray paas ab ikhlaqiat bhi nahi reh gaey. Reh gai baat behoodgi aur nung dharRang ki to haan may bhi in qayood ko maanta hoo.

  16. #15
    needoos is offline Banned
    Allah's slave, friend of
    friends and sword to western
    boot licker punks
     
    Join Date
    Oct 2008
    Location
    UK
    Posts
    7,523
    Quoted
    1558 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by PakistanZindaabaad View Post
    Bhai meray konsa hul aur kaisa hul??? ! karor baari hul bataya is kay baad bhi poocho kay hul kiya hay to yeh to sir deeewar say takranay wali baat hui. Saari batay chorRo kubhi suna hay kay koi kahay Indian Congress Party of USA ya phir BJP of London??? Mugar humaray logo ko dekho PPP (NY), PMLN (USA), PTI (USA). woh aik muhawara hay na kay you can take a pig out of the mud, but you cant take mud out of a pig wali misaal poori fit bethati hay humaray logo par. Aaj Indian hona aik fakhar ka maqam bun gaya hay, pehli baat jo logo kay zehno may aati hay Indian sun kay woh hoti hay kay INDIANS ARE SMART PEOPLE may nay nahi kaha meray aik Dominican coworker nay yeh baat ahi thi jis ko America aaey freaking saal bhi nahi hua tha. Aur agar Pakistan ki baat karo to dehshatgard aur low iq mentality level scum of the earth sumajhtay hay, meray samnay aik Irish American say aik aur dost nay poocha us ki beti kisi Pakistani kay saath shadi kur rahi hay woh kehta hay "Oh No thanks God NO", its not important what i said cause he didnt know i was Pakistani. Molvi sahib aik kehtay kay yahood o hanood o nisara kay sath dosti nahi kurna, mugar molvi sahib ka apna transplanted dil kis ka tha yeh un ko nahi maloom tha. bahar mojood 4 pakistaniyo ko pakarR lo 3 tumhay ushi mulk ko jis may woh kharRay hay galiya detay sunai daygay. Door kyu jatay ho forum ko hi dekh lo, haan koi agar Saudia say ho, qatar say ho, abu dhabi say ho ya phir dubai say haram hay us mulk kay baray may (jaha woh LEGALLY aik 3rd grade resident hay kay citizenship to woh detay hi nahi humaray Masakeen ko 100 baar bhi waha jum jaey) aik buri baat bhi kahay.
    Reh gai baat falestine aur israel ki to bhai woh aik ghetto hay. Woh mera masla nahi hay, hum nay usay kufar aur islam ki jung bana kur us ki maa behan kur dali hay. Reh gai baat Iraq ki to kashmir kay charar shareef walay peer sahib ki hikayat thi kay jub museebat asman say aati hay to woh Ghareeb kay ghar sub say pehlay rahaish rukhti hay.
    Bosnia ka masla aaj ka nahi sainkrRo saalo ka masla tha, Albanian nasal ko bohot arsay say Eastern Europe may log napasand kurtay thay, un ki Turkey say wafadari ki wajah say. May genocide ki wajah nahi bana raha aik wajah bata raha hoo, sub say barRi wajah to un ki jurm-e-zaifi hi tehri.

    Chalo yaar ab history lesson bus.
    Moral of the story ASAAN LUFZON MAY "MUNAFIQAT CHORrO AUR GHETTO MENTALITY SAY BAHIR AAO".

    ---------- Post added at 08:32 PM ---------- Previous post was at 08:20 PM ----------



    Yar mujhay yeh muntaq nahi sumajh may aai kay "unhoo nay hum say seekha" Yeh Rome aur Greece MashaAllah Baghdaad may thay? Ya Duniya !st Hijri say shuroo hui thi??? Reh gai baat sirf science and technology waali, aur humaray paas baqi sub kuch hay to yeh bhi aik jhoot hay, kay 10000 may Quran pay jhoothi qasam uthanay wala aap ko mil jata hay, zara West may dhoondho in ko, to log pagal khanay may bund kur day gay. Meray cousin nay 5 bundo ko beech bazar may qatal kiya aur us kay ghar walo nay wakeel nahi bulkay judge kur liya. Kiya baat kurtay ho...... Humaray paas ab ikhlaqiat bhi nahi reh gaey. Reh gai baat behoodgi aur nung dharRang ki to haan may bhi in qayood ko maanta hoo.
    LOL, yaar jou ghulaam dar ghulaam hain unnein kis tarah samjh aa sakti hai. Shayad yeh tumarey malikoon ki documentary kuch help karey! Itna zoor na dou dimaghri par, yeh na hou ke KAHIN burst he hou jaey

    http://www.bbc.co.uk/programmes/b00gksx4

    BBC Four - Science and Islam - Episode guide


  17. #16
    cancer is offline Expert Member
    not tired !!!!!!!!!!!
     
    Join Date
    Dec 2008
    Posts
    6,272
    Quoted
    1835 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Too good !!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!

  18. #17
    PakistanZindaabaad is offline Expert Member
    sick of pti bullies
     
    Join Date
    Aug 2009
    Posts
    3,312
    Quoted
    605 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by needoos View Post
    LOL, yaar jou ghulaam dar ghulaam hain unnein kis tarah samjh aa sakti hai. Shayad yeh tumarey malikoon ki documentary kuch help karey! Itna zoor na dou dimaghri par, yeh na hou ke KAHIN burst he hou jaey

    BBC Four - Science and Islam, The Language of Science

    BBC Four - Science and Islam - Episode guide

    dob4die

    phir kehtay ho koi hul batao....

    Needo yar tujhay jawaab likha tha teri sumajh boojh waala mugar azan ki awaaz aa gai lihaza next time . Meray mun may apnay alfaaz na daal.

  19. #18
    needoos is offline Banned
    Allah's slave, friend of
    friends and sword to western
    boot licker punks
     
    Join Date
    Oct 2008
    Location
    UK
    Posts
    7,523
    Quoted
    1558 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by PakistanZindaabaad View Post
    @dob4die

    phir kehtay ho koi hul batao....

    @Needo yar tujhay jawaab likha tha teri sumajh boojh waala mugar azan ki awaaz aa gai lihaza next time . Meray mun may apnay alfaaz na daal.
    Aur tu bi apni facist soch hamarey oopar muslat na kar, NAZI bananey ki koshish karey ga tou patai tou hou gi na teri . Chal abb soog mana aur rona mat

  20. #19
    PakistanZindaabaad is offline Expert Member
    sick of pti bullies
     
    Join Date
    Aug 2009
    Posts
    3,312
    Quoted
    605 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by needoos View Post
    Aur tu bi apni facist soch hamarey oopar muslat na kar, NAZI bananey ki koshish karey ga tou patai tou hou gi na teri . Chal abb soog mana aur rona mat
    Dekh tujhay chance diya halankay tu nay malik wali bakwaas ki... tu kamzori sumjha... ab gober may bhago bhago kay jootay teray pichwarRay maroo ga jub tuk bundar ki tarah laal na ho jaey teri...
    Pakistan may jis say poocho tumhay fascist kehta hay aur Nazi may? Kher Pitai aur tu??? buchpan ka kuni barRa ho kay khooni??? Needo pi pi kur itna bala ho gya muna??? Kher jitna marji bala ho ja rehay ga thalay hi kisay day

  21. #20
    __QanOOn__'s Avatar
    __QanOOn__ is offline ♡♥♡PTI♡♥♡
    "A man is enrolled near
    Allah as a liar if he is
    accustomed to false speaking
    and false discuss
     
    Join Date
    Dec 2011
    Location
    __PeshawaR__
    Posts
    13,692
    Quoted
    2574 Post(s)

    Re: Bad News, Good News about anti-Islamic, Neo-Nazi European Racism

    Quote Originally Posted by PakistanZindaabaad View Post
    سات برس بعد کا لندن


    وسعت اللہ خان
    بی بی سی اردو ڈاٹ کام،




    آخری وقت اشاعت: اتوار 1 اپريل 2012 ,* 07:48 GMT 12:48 PST




    لندن کی ایک اور خوبی بھی ہے، آپ بھلے سات برس بعد جائیں یا ستر برس بعد، ہر عمارت کا ظاہر جُوں کا تُوں ملے گا بھلے باطن کتنا ہی تبدیل ہوچکا ہو۔ اسی لئے لندن کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہاں آدمی راستہ تو بھول سکتا ہے گم نہیں ہوسکتا۔
    اگر سات برس بعد میں نے کچھ ظاہری تبدیلی محسوس کی تو بس یہ کہ سرکار پہلے کے مقابلے میں فلاحی کم اور کاروباری زیادہ ہوگئی ہے۔
    روزمرہ استعمال کی اشیاء اور ٹرانسپورٹ دوگنی مہنگی ہوگئی ہے۔ اولمپکس چونکہ سر پر ہیں لہذٰا ہر اہم شاہراہ اور چوک پر بڑی بڑی مرمتی مشینیں اور حفاظتی ہیٹ پہنے مزدور کھدائی، بھرائی، چنائی میں لگے ہوئے ہیں۔ بالخصوص مشرقی لندن کے پسماندہ محلوں کی قسمت جاگ گئی ہے۔ بیکار میدانوں میں کنکریٹ، لوہے اور شیشے کے رہائشی و کاروباری ڈھانچے کھڑے ہوگئے ہیں۔ سڑکوں کو ڈامر کی نئی وردی پہنا دی گئی ہے اور پولیس کا گشت پہلے سے بڑھ گیا ہے۔
    ایشین کارنر شاپس ہمیشہ کی طرح وقت کے کیپسول میں منجمد ہیں۔ وہاں آج بھی ساٹھ اور ستر کی دہائی کے محمد رفیع اور لتا منگیشکر کا راج ہے۔
    معیشت کی سخت گیری نے تارکینِ وطن کی میزبانی کے قوانین کو سخت تر کردیا ہے۔ سات جولائی دو ہزار پانچ کو لندن میں جو بم دھماکے ہوئے ان کے سماجی و نفسیاتی اثرات سات برس گذرنے کے باوجود گہرے ہیں۔
    گھیٹو مینٹلٹی

    ان لوگوں کا خیال تھا کہ الگ تھلگ رہنے سے نا تو بیرونی دنیا سے واسطہ ہوگا اور نا ہی ان کے عقائد و خیالات کو کوئی چیلنج درپیش ہوگا اور پھر وہ لاشعوری طور پر اپنے اندر ہی اندر گھستے چلے گئے۔ اس رویے نے انگریزی زبان کو گھیٹو مینٹلٹی کی اصطلاح عطا کی۔




    بظاہر حکومت نسلی اقلیتوں کو بڑے سماجی دھارے کا حصہ بنانے کی کوششیں کررہی ہے۔ پھر بھی بے اعتمادی سے پھوٹنے والے عدمِ تحفظ کا احساس کم ہوتا دکھائی نہیں پڑتا۔ بقول ایک مقامی ایشین صحافی ’ کچھ پتہ نہیں کون کس کے لئے کام کررہا ہے اور کون کسی کی نگرانی کررہا ہے ۔‘
    نتیجہ یہ ہے کہ نسلی اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں میں اپنی جڑوں اور شناخت کی تلاش و مراجعت اور اس شناخت کے ساتھ اکثریتی دھارے میں رہنے کی کچی پکی کوششوں نے ایک پیچیدہ نفسیاتی و سماجی شکل اخیتار کرلی ہے۔
    مثلاً جب میں نے جولائی دو ہزار پانچ میں لندن چھوڑا تو اس وقت تک حلال و حرام کی بحث صرف گوشت اور سودی کاروبار کے گرد گھومتی تھی۔گوشت پر حلال فوڈ اتھارٹی کی مہر لگتی تھی اور بینکوں نے بلاسودی قرضوں کی سکیمیں شروع کردی تھیں۔
    لیکن سات برس کے وقفے سے لندن میں پرانے دوستوں اور ان کے اہل ِ خانہ سے مل کر احساس ہوا کہ سماجی و نفسیاتی بے یقینی کے خلا کو دیگر بقائی مباحثوں کے ساتھ ساتھ حلال و حرام کی بحث نے بھی شدت سے لپیٹ میں لے لیا ہے۔ جیسے ایک صاحب نے اپنی صاحبزادی کے اصرار پر بہترین لیدر صوفہ اس لئے بیچ دیا کیونکہ صاحبزادی کو ایک دن شبہہ ہوگیا کہ اس کا چمڑا حلال نہیں۔ اسے یہ دلیل بھی قائل نا کرسکی کہ یہ چمڑا گائے کا ہے۔ صاحبزادی کا استدلال تھا کہ کیا ثبوت ہے کہ یہ مری ہوئی گائے کا چمڑا ہے یا زبیحہ گائے کا۔
    اسی طرح ایک پانچ چھ سالہ بچے کی والدہ نے بتایا کہ یہ سکول میں صرف وہ پنسلیں استعمال کرتا ہے جو حلال اتھارٹی سے منظور شدہ ہوں۔ ایک بچے کا خیال تھا کہ گوری لڑکیوں سے بات کرنا حلال عمل نہیں۔ ایک خاتون میک اپ کا وہ سامان استعمال کرتی ہیں جس کے بارے میں حلال پروڈکٹ کا سرٹیفکیٹ جاری کرنے والے کئی اداروں میں سے صرف ایک مخصوص ادارے نے سند جاری کی ہو۔
    مجھے اکثر دوستوں سے مل کے بار بار وہ یورپی یہودی کمیونٹیز یاد آتی رہیں جنہوں نے خود کو اکثریت کے ہاتھوں مذہبی، سیاسی، سماجی و نفسیاتی محصور سمجھتے ہوئے تقریباً ہزار برس قبل بڑے بڑے شہروں میں خود کو مخصوص (گھیٹوز) محلوں میں محصور کرلیا۔ ان کا خیال تھا کہ الگ تھلگ رہنے سے نا تو بیرونی دنیا سے واسطہ ہوگا اور نا ہی ان کے عقائد و خیالات کو کوئی چیلنج درپیش ہوگا اور پھر وہ لاشعوری طور پر اپنے اندر ہی اندر گھستے چلے گئے (اس رویے نے انگریزی زبان کو گھیٹو مینٹلٹی کی اصطلاح عطا کی)۔
    اگرچہ دوسری عالمی جنگ نے مغربی دنیا کی حد تک گھیٹو زہنیت کی جڑیں ہلا دیں مگر پھر ایک بڑا سا جدید گھیٹو اسرائیل کی شکل میں وجود میں آگیا۔
    کہنے کا مقصد یہ ہے کہ شناخت برقرار رکھنا ہر نسلی و مذہبی گروہ کا بنیادی حق ہے لیکن چہرہ بچاتے بچاتے بے چہرہ ہوجانا کون سی عقلمندی ہے۔







    MUJHAY LUGTA HAY KAY EUROPEAN MUSALMANO KO BHI YAHOODIYO KI TARAH AIK NASAL KUSHI SAY GUZARNA HO GA IS GHETTO SAY NIKALNAY KAY LIYE.... (NAUZUBILLAH)


    Very misleading.

Page 1 of 2 12 Last

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •  

Log in