All Pakistani Dramas Lists
Latest Episodes of Dramas - Latest Politics Shows - Latest Politics Discussions

Thread: یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

      
   
  1. #1
    khan2300's Avatar
    khan2300 is offline Senior Member
    Edit>
     
    Join Date
    Sep 2011
    Location
    London
    Posts
    521
    Quoted
    222 Post(s)

    Post یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

    یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی
    [ 23/09/2013 - 06:11 am ]
    مصری حکمران جنرل سیسی کے یہودی ہونے کے دستاویزی ثبوت میڈیا پر آنے کے بعد عرب عوام میں ہلچل مچ گئی ہے لیکن حکمرانوں کی سطح پر بدستور سناٹا ہے۔ عرب حکمرانوں کا مسئلہ یہودی کبھی رہے ہی نہیں۔ عرب کنگڈم کی جماعت ’’النّور‘‘ کا ردّعمل بھی وہی ہے جو عرب حکمرانوں کا ہے۔ یعنی سب قبول ہے، بس اخوان قبول نہیں۔ جماعت النّور کا ویسے بھی کبھی یہودیوں سے ’’نظریاتی اختلاف‘‘ نہیں رہا۔

    جنرل سیسی کی والدہ مراکش کی یہودی خاتون تھی جس کا نام ملیکہ تیتانی تھا۔1958ء میں اُس نے مصر کی شہریت لی۔ اس کا بھائی عوری صباغ اسرائیل کا وزیر تعلیم رہا ہے۔ صدر عدلی منصور کے بارے میں تو یہ پہلے ہی آچکا ہے کہ وہ عیسائیوں کے سبطی نام کے ایسے فرقے کا رکن ہے جسے عیسائی تعلیم نہیں کرتے۔ یہ فرقہ خود کو عیسائی بتاتا ہے لیکن عیسائی کہتے ہیں کہ یہ یہودیوں کی شاخ ہے۔ یہ بات زمانۂ آخر ہی کی نشانی لگتی ہے کہ عربستان کے سب سے بڑے ملک پر یہودیوں کی حکومت کسی یلغار ،کسی جنگ کے بغیر ہی بن گئی ہے۔

    سیسی اور عدلی تو چلئے یہودی ہوئے لیکن باقی عرب ممالک کے سربراہ تو مبینہ طور پر مسلمان ہیں، وہ کیوں سوائے قطر اور تیونس کے سارے کے سارے یہودیوں پر جان چھڑکنے لگے۔ اس حد تک کہ بڑی عرب کنگڈم کی اخوان سے پہلی ناراضی اس وقت شروع ہوئی تھی جب مرسی نے فلسطینیوں کی ناکہ بندی ختم کی۔ کنگڈم کا کہنا تھا کہ فلسطینیوں کو گندم کا ایک دانہ بھی نہیں ملنا چاہئے۔ گویا دو ایک ملکوں کو چھوڑ کر تمام عالم عرب اسرائیل نے گولی چلائے بغیر فتح کر لیا ہے تو اسے قیامت کی نشانی کیوں نہ سمجھا جائے۔ نشانی یہ ہے کہ قیامت سے پہلے عراق و اردن سے لے کر حجاز و مصر تک یہودیوں کا قبضہ ہو جائے گا۔ صورتحال دیکھ لیں، نشانی بتا دے گی کہ وہ پوری ہو گئی۔

    جنرل سیسی نے چار سے پانچ ہزار اخوان قتل، پچیس ہزار زخمی کر دیئے جن میں بہت سے معذور ہو چکے ہیں، دس ہزار گرفتار کر لئے اور کئی ہزار لاپتہ ہیں۔ مان لیجئے کہ یہ سب ’’قدرتی‘‘ ہے۔ کوئی بھی آمر اپنے مخالفوں کے ساتھ یہی کرتا لیکن سیسی نے کچھ اور اقدامات بھی کئے ہیں جن سے پتہ چلتا ہے کہ معاملہ کچھ اور بھی ہے۔ اور یہ معاملہ یوں کھلا کہ والدہ کے نام کا پتہ چل گیا اور موصوف کے ماموں کا بھی جو اسرائیل کا وزیر رہا اور یہ بھی علم ہوگیا کہ کیوں اسرائیل نے کہا تھا کہ سیسی یہودی قوم کا ہیرو ہے۔ یہ اقدامات ملاحظہ ہوں:
    اس نے 45ہزار علمائے کرام کے مساجد میں داخلے پر پابندی لگا دی۔ مصر کی تیرہ ہزار سے زیادہ مساجد میں جمعے کی نماز روک دی ہے (اسرائیل ایک مسجد میں نماز روکتا ہے تو مسلمان دنیا بھر میں سڑکوں پر نکل آتے ہیں)۔ اب اس نے نعوذ باللہ قرآن پاک کی پیروڈی کرتے ہوئے ایک سورۃ ’’السیسی‘‘ کے نام سے بنائی ہے جس کے الفاظ یوں ہیں۔سیسی اور تمہیں کیا پتہ کیا ہے سیسی، ہلاک ہوگئے اخوان جوشیطان ہیں۔ وغیرہ اور اس ’’سورۃ‘‘ کے آخر میں سیسی کو فرعونوں کی اولاد کہہ کر اسے انسانیت پر خدا کا انعام بتایا گیا ہے۔ قرآن پاک کی ایسی توہین کی یہودی سے بالکل توقع ہے لیکن اس پر خاموشی نئی بات ہے۔

    یہودی فلسطینیوں سے سخت نفرت کرتے ہیں اور اس نفرت کی تاریخ اسرائیل کے قیام اور اس کی وجہ سے ہونے والی لڑائی تک محدود نہیں۔ یہ نفرت بڑی پرانی ہے اور سیسی نے اس نفرت کو کبھی چھپایا نہیں۔
    اس نے برسراقتدار آکر فلسطینیوں کی پہلے سے بھی سخت ناکہ بندی کر دی۔ غزہ کو دنیا سے ملانے والا واحد راستہ وہ سرنگیں ہیں جو سینائی کے شہر رفاہ کو غزہ سے ملاتی ہیں (غزہ کی پٹی کے ساتھ سمندر بھی لگتا ہے لیکن یہ چھوٹا سا ساحل اسرائیل کے قبضہ میں ہے) سیسی نے یہ سرنگیں تباہ کر دیں اور فلسطینیوں کی مصر آمدورفت روک دی۔

    نفرت کا جنون دیکھئے۔ پانچ فلسطینی ماہی گیر مچھلیاں پکڑتے ہوئے مصر کی حدود میں داخل ہوگئے۔ انہیں پکڑ کر مقدمے چلائے گئے اور کئی سال قید سنا دی گئی۔ ماہی گیر سمندری حدود کی خلاف ورزی پر دنیا بھر میں پکڑے جاتے ہیں اور پھر یہ تصدیق ہونے پر کہ وہ ماہی گیر ہی ہیں، بھیس بدلے دشمن کے ایجنٹ یا سمگلر نہیں ہیں، رہا کر دیئے جاتے ہیں۔ دنیا کے کسی ملک میں انہیں سزا نہیں دی جاتی۔ پاکستان اور بھارت ایک دوسرے کے ماہی گیر اکثر پکڑا کرتے ہیں اور پھر چھوڑ دیتے ہیں۔ یہ پہلی مثال ہے کہ غلطی سے سمندری حدود کی خلاف ورزی پر کسی ملک نے مقدمہ چلایا اور سزا سنا دی ۔

    سیسی نے پورے ملک میں پابندی لگا دی ہے کہ کسی دیوار یا اخبار رسالے یا اشتہار پر مسجد اقصیٰ کی فوٹو نہیں چھپے گی۔ صرف تصویر ہی نہیں، کوئی شخص کسی بھی جگہ بیت المقدس، مسجد اقصیٰ یا القدس کا لفظ بھی نہیں لکھ سکتا۔ جو لکھتا ہوا پایا گیا، اس پر دہشت گردی کا مقدمہ چلے گا۔ مسجد اقصیٰ سے اتنی نفرت دنیا میں صرف دو ہی مذہب کرتے ہیں۔ ایک یہودی اور دوسرے ایونجلیکل چرچ۔ یہ عیسائیوں کا وہ فرقہ ہے جو یہودیوں کا اس بارے میں ہم عقیدہ ہے کہ حضرت مسیح ؑ کی آمد ثانی تب تک ممکن نہیں جب تک مسجد اقصیٰ گرا کر ہیکل سلیمانی تعمیر نہیں کر دیا جاتا۔ باقی مسیحیوں کو اس سے کوئی غرض نہیں کہ ہیکل سلیمانی بنتا ہے یا نہیں۔

    بیت المقدس سے سیسی اور عدلی کی نفرت کی وجہ سمجھ میں آگئی۔ یہ سوچنا باقی ہے کہ جامعۃ الازہر کا شیخ اور جماعت النور سلفی کا سربراہ بھی ان لوگوں کے ہم عقیدہ ہے اور اسی لئے خاموش ہے یا چپ رہنے کی وجہ کچھ اور ہے۔ مثلاً صحت کا کوئی مسئلہ، کوئی اچانک لاحق ہو جانے والا عارضہ!

    پورے عربستان میں صرف تیونس اور قطر ہیں جو مسجد اقصیٰ کی حرمت کے قائل ہیں، باقی سارے عرب حکمران، شیوخ، رؤسا، بیوروکریٹ، جرنیل، صنعتکار، میڈیا، علمائے کرام ہیکل سلیمانی پر ایمان لا چکے۔ اقرار باللّساننہ سہی، اقرار بالقلب ہی سہی مگر ان کے ’’مومنینِ ہیکل ‘‘ ہونے میں کوئی شبہ نہیں۔ جو بات یہ ایمان لانے والے نہیں سمجھتے ، وہ یہ ہے کہ ہیکل اب کبھی نہیں بن سکتا۔ دجّال جب آچکے گا، تب بھی نہیں بن سکے گا۔ ایک مزے کی بات یہ معلوم ہوئی کہ سیسی نے اپنی یہودیانہ مکاری سے کام لیتے ہوئے اخوان کی قیادت کو باور کرایا کہ وہ تو شروع ہی سے اخوان کے بانی امام حسن البناؒ کا معتقد اور مرید ہے۔ اخوان کی قیادت اس مکاری میں آگئی اور اس پر بھروسہ کر لیا ۔ ایسا ہی ماجرا پاکستان میں بھی ہو چکا ہے۔

    جماعت اسلامی کی قیادت سے مشرف نے بھی یہی کہا تھا کہ وہ مسلمان ہے اور جہاد کشمیر کا حامی ہے اور جماعت اس کے جال میں پھنس گئی۔ مشرف کیسا مسلمان تھا، اس کا پتہ تب چلا جب دنیا بھر کے یہودیوں نے مشرف کی صحت اور سلامتی کے لئے اپنے سناگاگوں(معبدوں) میں دعائیں کیں اور اس کے لئے اپنے مذہبی شبینے کئے اور دیوار گریہ پر گریہ کیا۔ مشرف ایسا مسلمان تھا جس نے جہاد کو دہشت گردی قرار دلوایا اور وہ ایسا مسلمان تھا جس نے اپنے راستے میں آنے والی ہر مسجد مسمار کر دی۔ وہ ایسا مسلمان تھا جو حدیث رسول کا کھلم کھلا اور تکرار کے ساتھ مذاق اڑاتا تھا اور اس کے قاف لیگی قافیے زبان حال سے اسے داد دیتے اور رقصِ سرمستی کرتے۔ اس نے رنگیلا شاہی کا نام تصّوف رکھا اور تجربہ کار، ادھیڑ عمر بلکہ عمر رسیدہ رال ٹپکاتے شوقین صوفیوں کی جماعت بنائی۔ مشرف ایسا مسلمان تھا جس کے دور میں ’’ریاست‘‘ ایک قحبہ خانے کی محافظ بنی اور قحبہ خانے کے لئے پریشانی پیدا کرنے والی لال مسجد اور جامعہ حفصہ کو صفحہ ہستی سے اسی ریاست نے مٹایا۔ اس سے پہلے کہ پورا پاکستان’’رنگیلستان‘‘بنا دیا جاتا، خدائی مشیت حرکت میں آئی اور جسٹس افتخار محمد چوہدری میدان میں آ گئے۔ پھر لوگوں نے دیکھا کہ افتخار چوہدری اٹھ کھڑا ہوا اور رنگیلے اور شوقین صوفیوں کا طائفہ شیخ الطائفہ سمیت بھاگ کھڑا ہوا۔

    بشکریہ روزنامہ "نئی بات""

  2. #2
    patriot19472001's Avatar
    patriot19472001 is offline Senior Member
    WELL DONE is better than well
    said!!!
     
    Join Date
    Nov 2009
    Posts
    979
    Blog Entries
    2
    Quoted
    94 Post(s)

    Re: یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

    Quote Originally Posted by khan2300 View Post
    یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی
    [ 23/09/2013 - 06:11 am ]
    مصری حکمران جنرل سیسی کے یہودی ہونے کے دستاویزی ثبوت میڈیا پر آنے کے بعد عرب عوام میں ہلچل مچ گئی ہے لیکن حکمرانوں کی سطح پر بدستور سناٹا ہے۔ عرب حکمرانوں کا مسئلہ یہودی کبھی رہے ہی نہیں۔ عرب کنگڈم کی جماعت ’’النّور‘‘ کا ردّعمل بھی وہی ہے جو عرب حکمرانوں کا ہے۔ یعنی سب قبول ہے، بس اخوان قبول نہیں۔ جماعت النّور کا ویسے بھی کبھی یہودیوں سے ’’نظریاتی اختلاف‘‘ نہیں رہا۔

    جنرل سیسی کی والدہ مراکش کی یہودی خاتون تھی جس کا نام ملیکہ تیتانی تھا۔1958ء میں اُس نے مصر کی شہریت لی۔ اس کا بھائی عوری صباغ اسرائیل کا وزیر تعلیم رہا ہے۔ صدر عدلی منصور کے بارے میں تو یہ پہلے ہی آچکا ہے کہ وہ عیسائیوں کے سبطی نام کے ایسے فرقے کا رکن ہے جسے عیسائی تعلیم نہیں کرتے۔ یہ فرقہ خود کو عیسائی بتاتا ہے لیکن عیسائی کہتے ہیں کہ یہ یہودیوں کی شاخ ہے۔ یہ بات زمانۂ آخر ہی کی نشانی لگتی ہے کہ عربستان کے سب سے بڑے ملک پر یہودیوں کی حکومت کسی یلغار ،کسی جنگ کے بغیر ہی بن گئی ہے۔

    سیسی اور عدلی تو چلئے یہودی ہوئے لیکن باقی عرب ممالک کے سربراہ تو مبینہ طور پر مسلمان ہیں، وہ کیوں سوائے قطر اور تیونس کے سارے کے سارے یہودیوں پر جان چھڑکنے لگے۔ اس حد تک کہ بڑی عرب کنگڈم کی اخوان سے پہلی ناراضی اس وقت شروع ہوئی تھی جب مرسی نے فلسطینیوں کی ناکہ بندی ختم کی۔ کنگڈم کا کہنا تھا کہ فلسطینیوں کو گندم کا ایک دانہ بھی نہیں ملنا چاہئے۔ گویا دو ایک ملکوں کو چھوڑ کر تمام عالم عرب اسرائیل نے گولی چلائے بغیر فتح کر لیا ہے تو اسے قیامت کی نشانی کیوں نہ سمجھا جائے۔ نشانی یہ ہے کہ قیامت سے پہلے عراق و اردن سے لے کر حجاز و مصر تک یہودیوں کا قبضہ ہو جائے گا۔ صورتحال دیکھ لیں، نشانی بتا دے گی کہ وہ پوری ہو گئی۔

    جنرل سیسی نے چار سے پانچ ہزار اخوان قتل، پچیس ہزار زخمی کر دیئے جن میں بہت سے معذور ہو چکے ہیں، دس ہزار گرفتار کر لئے اور کئی ہزار لاپتہ ہیں۔ مان لیجئے کہ یہ سب ’’قدرتی‘‘ ہے۔ کوئی بھی آمر اپنے مخالفوں کے ساتھ یہی کرتا لیکن سیسی نے کچھ اور اقدامات بھی کئے ہیں جن سے پتہ چلتا ہے کہ معاملہ کچھ اور بھی ہے۔ اور یہ معاملہ یوں کھلا کہ والدہ کے نام کا پتہ چل گیا اور موصوف کے ماموں کا بھی جو اسرائیل کا وزیر رہا اور یہ بھی علم ہوگیا کہ کیوں اسرائیل نے کہا تھا کہ سیسی یہودی قوم کا ہیرو ہے۔ یہ اقدامات ملاحظہ ہوں:
    اس نے 45ہزار علمائے کرام کے مساجد میں داخلے پر پابندی لگا دی۔ مصر کی تیرہ ہزار سے زیادہ مساجد میں جمعے کی نماز روک دی ہے (اسرائیل ایک مسجد میں نماز روکتا ہے تو مسلمان دنیا بھر میں سڑکوں پر نکل آتے ہیں)۔ اب اس نے نعوذ باللہ قرآن پاک کی پیروڈی کرتے ہوئے ایک سورۃ ’’السیسی‘‘ کے نام سے بنائی ہے جس کے الفاظ یوں ہیں۔سیسی اور تمہیں کیا پتہ کیا ہے سیسی، ہلاک ہوگئے اخوان جوشیطان ہیں۔ وغیرہ اور اس ’’سورۃ‘‘ کے آخر میں سیسی کو فرعونوں کی اولاد کہہ کر اسے انسانیت پر خدا کا انعام بتایا گیا ہے۔ قرآن پاک کی ایسی توہین کی یہودی سے بالکل توقع ہے لیکن اس پر خاموشی نئی بات ہے۔

    یہودی فلسطینیوں سے سخت نفرت کرتے ہیں اور اس نفرت کی تاریخ اسرائیل کے قیام اور اس کی وجہ سے ہونے والی لڑائی تک محدود نہیں۔ یہ نفرت بڑی پرانی ہے اور سیسی نے اس نفرت کو کبھی چھپایا نہیں۔
    اس نے برسراقتدار آکر فلسطینیوں کی پہلے سے بھی سخت ناکہ بندی کر دی۔ غزہ کو دنیا سے ملانے والا واحد راستہ وہ سرنگیں ہیں جو سینائی کے شہر رفاہ کو غزہ سے ملاتی ہیں (غزہ کی پٹی کے ساتھ سمندر بھی لگتا ہے لیکن یہ چھوٹا سا ساحل اسرائیل کے قبضہ میں ہے) سیسی نے یہ سرنگیں تباہ کر دیں اور فلسطینیوں کی مصر آمدورفت روک دی۔

    نفرت کا جنون دیکھئے۔ پانچ فلسطینی ماہی گیر مچھلیاں پکڑتے ہوئے مصر کی حدود میں داخل ہوگئے۔ انہیں پکڑ کر مقدمے چلائے گئے اور کئی سال قید سنا دی گئی۔ ماہی گیر سمندری حدود کی خلاف ورزی پر دنیا بھر میں پکڑے جاتے ہیں اور پھر یہ تصدیق ہونے پر کہ وہ ماہی گیر ہی ہیں، بھیس بدلے دشمن کے ایجنٹ یا سمگلر نہیں ہیں، رہا کر دیئے جاتے ہیں۔ دنیا کے کسی ملک میں انہیں سزا نہیں دی جاتی۔ پاکستان اور بھارت ایک دوسرے کے ماہی گیر اکثر پکڑا کرتے ہیں اور پھر چھوڑ دیتے ہیں۔ یہ پہلی مثال ہے کہ غلطی سے سمندری حدود کی خلاف ورزی پر کسی ملک نے مقدمہ چلایا اور سزا سنا دی ۔

    سیسی نے پورے ملک میں پابندی لگا دی ہے کہ کسی دیوار یا اخبار رسالے یا اشتہار پر مسجد اقصیٰ کی فوٹو نہیں چھپے گی۔ صرف تصویر ہی نہیں، کوئی شخص کسی بھی جگہ بیت المقدس، مسجد اقصیٰ یا القدس کا لفظ بھی نہیں لکھ سکتا۔ جو لکھتا ہوا پایا گیا، اس پر دہشت گردی کا مقدمہ چلے گا۔ مسجد اقصیٰ سے اتنی نفرت دنیا میں صرف دو ہی مذہب کرتے ہیں۔ ایک یہودی اور دوسرے ایونجلیکل چرچ۔ یہ عیسائیوں کا وہ فرقہ ہے جو یہودیوں کا اس بارے میں ہم عقیدہ ہے کہ حضرت مسیح ؑ کی آمد ثانی تب تک ممکن نہیں جب تک مسجد اقصیٰ گرا کر ہیکل سلیمانی تعمیر نہیں کر دیا جاتا۔ باقی مسیحیوں کو اس سے کوئی غرض نہیں کہ ہیکل سلیمانی بنتا ہے یا نہیں۔

    بیت المقدس سے سیسی اور عدلی کی نفرت کی وجہ سمجھ میں آگئی۔ یہ سوچنا باقی ہے کہ جامعۃ الازہر کا شیخ اور جماعت النور سلفی کا سربراہ بھی ان لوگوں کے ہم عقیدہ ہے اور اسی لئے خاموش ہے یا چپ رہنے کی وجہ کچھ اور ہے۔ مثلاً صحت کا کوئی مسئلہ، کوئی اچانک لاحق ہو جانے والا عارضہ!

    پورے عربستان میں صرف تیونس اور قطر ہیں جو مسجد اقصیٰ کی حرمت کے قائل ہیں، باقی سارے عرب حکمران، شیوخ، رؤسا، بیوروکریٹ، جرنیل، صنعتکار، میڈیا، علمائے کرام ہیکل سلیمانی پر ایمان لا چکے۔ اقرار باللّساننہ سہی، اقرار بالقلب ہی سہی مگر ان کے ’’مومنینِ ہیکل ‘‘ ہونے میں کوئی شبہ نہیں۔ جو بات یہ ایمان لانے والے نہیں سمجھتے ، وہ یہ ہے کہ ہیکل اب کبھی نہیں بن سکتا۔ دجّال جب آچکے گا، تب بھی نہیں بن سکے گا۔ ایک مزے کی بات یہ معلوم ہوئی کہ سیسی نے اپنی یہودیانہ مکاری سے کام لیتے ہوئے اخوان کی قیادت کو باور کرایا کہ وہ تو شروع ہی سے اخوان کے بانی امام حسن البناؒ کا معتقد اور مرید ہے۔ اخوان کی قیادت اس مکاری میں آگئی اور اس پر بھروسہ کر لیا ۔ ایسا ہی ماجرا پاکستان میں بھی ہو چکا ہے۔

    جماعت اسلامی کی قیادت سے مشرف نے بھی یہی کہا تھا کہ وہ مسلمان ہے اور جہاد کشمیر کا حامی ہے اور جماعت اس کے جال میں پھنس گئی۔ مشرف کیسا مسلمان تھا، اس کا پتہ تب چلا جب دنیا بھر کے یہودیوں نے مشرف کی صحت اور سلامتی کے لئے اپنے سناگاگوں(معبدوں) میں دعائیں کیں اور اس کے لئے اپنے مذہبی شبینے کئے اور دیوار گریہ پر گریہ کیا۔ مشرف ایسا مسلمان تھا جس نے جہاد کو دہشت گردی قرار دلوایا اور وہ ایسا مسلمان تھا جس نے اپنے راستے میں آنے والی ہر مسجد مسمار کر دی۔ وہ ایسا مسلمان تھا جو حدیث رسول کا کھلم کھلا اور تکرار کے ساتھ مذاق اڑاتا تھا اور اس کے قاف لیگی قافیے زبان حال سے اسے داد دیتے اور رقصِ سرمستی کرتے۔ اس نے رنگیلا شاہی کا نام تصّوف رکھا اور تجربہ کار، ادھیڑ عمر بلکہ عمر رسیدہ رال ٹپکاتے شوقین صوفیوں کی جماعت بنائی۔ مشرف ایسا مسلمان تھا جس کے دور میں ’’ریاست‘‘ ایک قحبہ خانے کی محافظ بنی اور قحبہ خانے کے لئے پریشانی پیدا کرنے والی لال مسجد اور جامعہ حفصہ کو صفحہ ہستی سے اسی ریاست نے مٹایا۔ اس سے پہلے کہ پورا پاکستان’’رنگیلستان‘‘بنا دیا جاتا، خدائی مشیت حرکت میں آئی اور جسٹس افتخار محمد چوہدری میدان میں آ گئے۔ پھر لوگوں نے دیکھا کہ افتخار چوہدری اٹھ کھڑا ہوا اور رنگیلے اور شوقین صوفیوں کا طائفہ شیخ الطائفہ سمیت بھاگ کھڑا ہوا۔

    بشکریہ روزنامہ "نئی بات""
    بہت عمدہ - آپ لوگ باتوں کے قلعے بہت زبردست تعمیر کرتے ہیں - لوگوں کے جذبات سے کھیل کر انکو بیوقوف بنانا بہت اچھے سے آتا ہے آپ کو -

  3. #3
    R4BIAN's Avatar
    R4BIAN is offline Expert Member
    Edit>
     
    Join Date
    Jun 2011
    Posts
    4,778
    Quoted
    2296 Post(s)

    Re: یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

    Quote Originally Posted by patriot19472001 View Post
    بہت عمدہ - آپ لوگ باتوں کے قلعے بہت زبردست تعمیر کرتے ہیں - لوگوں کے جذبات سے کھیل کر انکو بیوقوف بنانا بہت اچھے سے آتا ہے آپ کو -
    آپ اِن باتوں کو جھوٹ ثابت کردیں۔ جن لوگوں کے جذبات زن، زر،زمین کی محبت میں مُردہ ہوچکے ہیں اُن کے جذبات سے کیا کھیلنا۔

  4. #4
    benice's Avatar
    benice is offline Expert Member
    سبحان اللہ
     
    Join Date
    Jan 2010
    Location
    Karachi
    Posts
    7,510
    Quoted
    1140 Post(s)

    Re: یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

    Quote Originally Posted by R4BIAN View Post
    آپ اِن باتوں کو جھوٹ ثابت کردیں۔ جن لوگوں کے جذبات زن، زر،زمین کی محبت میں مُردہ ہوچکے ہیں اُن کے جذبات سے کیا کھیلنا۔

    صحیح کہہ رہے ہیں بھائی جان۔
    ان تمام لوگوں کا قبلہ دولت، عورت اور عیش وآرام ہے
    اسی لیے تو اللہ نے اس زمین میں ایک سے ایک بڑا فتنہ پیدا کر دیا ہے۔
    اور یہ پوری قوم آگ میں جل رہی ہے۔

    Learn Urdu if you say you are Pakistani ..... Read and Write in Nastaliq

  5. #5
    patriot19472001's Avatar
    patriot19472001 is offline Senior Member
    WELL DONE is better than well
    said!!!
     
    Join Date
    Nov 2009
    Posts
    979
    Blog Entries
    2
    Quoted
    94 Post(s)

    Re: یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

    Quote Originally Posted by R4BIAN View Post
    آپ اِن باتوں کو جھوٹ ثابت کردیں۔ جن لوگوں کے جذبات زن، زر،زمین کی محبت میں مُردہ ہوچکے ہیں اُن کے جذبات سے کیا کھیلنا۔
    جناب والا - ثابت تو ہم تب کریں گے نا جب آپ کی بیان کردہ کوئی بات ثبوت کے ساتھ ہوگی - الفاظ کے آپ کھیلیں اور ثبوت ہم دیں - کافی انوکھی منطق ہے آپ کی -آپ لوگ تو شاید اس وقت بھی شرمندہ نہیں ہوۓ تھے جب آپ کے امیر نے نام نہاد مجاھدین کو شہید اور فوج کو کچھ اور کہا تھا - اب خدارا اپنی غلطیوں اور کوتاہیوں کی دلیل مت دیجیے گا - اخوان کو بدنام کرنے میں بھی انہی نام نہاد لوگوں کا ہاتھ ہے اخوان ایک امن پسند تنظیم تھی اور اب القاعدہ کی شاخ کہلاتی ہے یہ نام نہاد مجاہدین اسلام کے نام پر دینی تنظیموں کو بڑی آسانی سے ہائی جیک کر لیتے ہیں

    الله ہم سب کو ہدایت دے

  6. #6
    R4BIAN's Avatar
    R4BIAN is offline Expert Member
    Edit>
     
    Join Date
    Jun 2011
    Posts
    4,778
    Quoted
    2296 Post(s)

    Re: یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

    Quote Originally Posted by patriot19472001 View Post
    جناب والا - ثابت تو ہم تب کریں گے نا جب آپ کی بیان کردہ کوئی بات ثبوت کے ساتھ ہوگی - الفاظ کے آپ کھیلیں اور ثبوت ہم دیں - کافی انوکھی منطق ہے آپ کی -آپ لوگ تو شاید اس وقت بھی شرمندہ نہیں ہوۓ تھے جب آپ کے امیر نے نام نہاد مجاھدین کو شہید اور فوج کو کچھ اور کہا تھا - اب خدارا اپنی غلطیوں اور کوتاہیوں کی دلیل مت دیجیے گا - اخوان کو بدنام کرنے میں بھی انہی نام نہاد لوگوں کا ہاتھ ہے اخوان ایک امن پسند تنظیم تھی اور اب القاعدہ کی شاخ کہلاتی ہے یہ نام نہاد مجاہدین اسلام کے نام پر دینی تنظیموں کو بڑی آسانی سے ہائی جیک کر لیتے ہیں

    الله ہم سب کو ہدایت دے
    یہ تمام باتیں آن دی ریکارڈ ہیں اگرآپ اپنی پوسٹ میں لیپا پوتی کرنے سے پہلے خود ہی تحقیق کرنے کی زحمت کرلیتے تو یہ دہرانے کی ضرورت نہ پڑتی۔ جتنی بات ہو اُتنی پر ہی رہیئے یہ یاد رکھیں کہ آپ کا گھر بھی شیشے کا ہے۔ ریکارڈ کی درستگی کیلئے بتادو کہ اخوان کو کچھ ہی عرصہ بیتا ہے جمہوریت کی راہ کو اپناتے ہوئے اور اُس سے پہلے وہ طاقت کے زور پر نظام بدلنے پر یقین رکھتی تھی۔ جمال عبدالناصر انہی کی مدد سے اقتدار پر قابض ہوا تھا اور اقتدار میں آنے کےبعد اِس جمال عبدالناصر نے اخوان کے خلاف کریک ڈاون کیا۔ جہاں تک القاعدہ کی شاخ کہلانے کی بات ہے تو یہ بھی بتا دو کہ القاعدہ اخوان کے نظریے کے ہی سراسر مخالف ہے تو شاخ کہلانا تو دور کی بات ٹہری۔ میں اِس انتظار میں تھا کہ 14 اگست 2013 کے روز اخوان کا قتلِ عام کیا گیا اُس کے بعد تو اخوان بالآخر یہودی نواز فوج کے خلاف مسلح مزاحمت شروع کردے گی لیکن ایسا کچھ نہ ہوا۔ آپ ذرا دل پر ہاتھ رکھ کر بتاو کہ ہمیں امریکہ سے فوجی امداد کس بات کی مِل رہی ہے؟ وہ کونسی قدرِ مشترک ہے کہ امریکہ اور ہماری فوج باہم مل کر وزیرستان میں آپریشن کررہی ہے؟ امریکہ کب سے آپ کامخلص دوست بن گیا؟

  7. #7
    benice's Avatar
    benice is offline Expert Member
    سبحان اللہ
     
    Join Date
    Jan 2010
    Location
    Karachi
    Posts
    7,510
    Quoted
    1140 Post(s)

    Re: یہودیوں کا قبضہ ۔۔۔ ایک اور نشانی پوری ہو گئی

    Quote Originally Posted by R4BIAN View Post
    یہ تمام باتیں آن دی ریکارڈ ہیں اگرآپ اپنی پوسٹ میں لیپا پوتی کرنے سے پہلے خود ہی تحقیق کرنے کی زحمت کرلیتے تو یہ دہرانے کی ضرورت نہ پڑتی۔ جتنی بات ہو اُتنی پر ہی رہیئے یہ یاد رکھیں کہ آپ کا گھر بھی شیشے کا ہے۔ ریکارڈ کی درستگی کیلئے بتادو کہ اخوان کو کچھ ہی عرصہ بیتا ہے جمہوریت کی راہ کو اپناتے ہوئے اور اُس سے پہلے وہ طاقت کے زور پر نظام بدلنے پر یقین رکھتی تھی۔ جمال عبدالناصر انہی کی مدد سے اقتدار پر قابض ہوا تھا اور اقتدار میں آنے کےبعد اِس جمال عبدالناصر نے اخوان کے خلاف کریک ڈاون کیا۔ جہاں تک القاعدہ کی شاخ کہلانے کی بات ہے تو یہ بھی بتا دو کہ القاعدہ اخوان کے نظریے کے ہی سراسر مخالف ہے تو شاخ کہلانا تو دور کی بات ٹہری۔ میں اِس انتظار میں تھا کہ 14 اگست 2013 کے روز اخوان کا قتلِ عام کیا گیا اُس کے بعد تو اخوان بالآخر یہودی نواز فوج کے خلاف مسلح مزاحمت شروع کردے گی لیکن ایسا کچھ نہ ہوا۔ آپ ذرا دل پر ہاتھ رکھ کر بتاو کہ ہمیں امریکہ سے فوجی امداد کس بات کی مِل رہی ہے؟ وہ کونسی قدرِ مشترک ہے کہ امریکہ اور ہماری فوج باہم مل کر وزیرستان میں آپریشن کررہی ہے؟ امریکہ کب سے آپ کامخلص دوست بن گیا؟

    جناب یہ بات دولت اور عورتوں کے عاشقوں کو سمجھ نہیں آئے گی۔
    آپ کی کوشش رئیگاں جائے گی۔
    یہ تمام مسلمان کا روپ دھار کر یہاں آتے ہیں۔
    اگر انھوں نے قرآن پڑھا ہوتا اور اسے سمجھا ہوتا تو آج حالات کچھ اور ہوتے۔
    ان کی ٹانگیں صرف شریعت کا نام لینے پر ہی کانپنے لگتی ہیں۔
    شریعت کی الف بے کا پتہ نہیں اور یہاں بڑی عالمانہ بحث کریں گے۔
    امریکہ کے مفادات کے لیے کام کرتے ہیں اور مرنے پر اپنے آپ کو شہید کہتے ہیں۔
    ہے نا کمال؟؟

    Learn Urdu if you say you are Pakistani ..... Read and Write in Nastaliq

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •  

Log in