آہ اشتیاق احمد


جیسے ہی میں اردو فینز پر لاگن ہوا تو ایک خبر پر میری نظر پڑتے ہی میرے ہوش اڑگئے جی وہ خبر ہی ایسی تھی سب کے ہر دلعزیز محبوب مصنف اشتیاق احمد کے انتقال کی خبر سنی تو مجھے تو پہلے یقین نہیں آیا آیا تو بہت دکھ افسوس اور دلی رنج ہوا لیکن یہ مکافات عمل ہے جس نے آنا ہے تو پھر جانا بھی اللہ پاک ان کی مغفرت فرمائے آمین ثمہ آمین پہلے پہل تو یقین نہیں آیا پھر اس کے بعد میں اپنے ماضی میں چلا گیا جب میں نے اشتیاق احمد کے ناول پڑھنا شروع کئے تھے اور مزے کی بات یہ کہ اشتیاق احمد کی ابتداء ہی تھی کہ جیرال کا منصوبہ ان کا پہلا خاص نمبر تھا جو کہ میں نے بازار سے خرید کر پڑھا اس سے قبل بھی میں نے ان کے کئ ناول پڑھ ڈالے تھے اس وقت ان کے ناول بہت چھوٹے سائز کے ہوتے تھے اور مارکیٹ میں آتے ہی غائب ہوجاتے تھے ان کی پہلے سے بکنگ کرانا پڑتی تھی اور اسٹال پر لکھا ہوا کرتا تھا کہ اشتیاق احمد کے ناول کی ایڈوانس بکنگ جاری ہے ۔ اشتیاق احمد نے سب سے زیادہ سیریز انسپکٹر جمشید پر زیادہ لکھا اس کے ساتھ ساتھ پھر انسپکٹر کامران سیریز لکھی گئی دونوں پارٹیوں کا مشترکہ خاص نمبر اپنے آپ ایک عمدہ کمبینیشن تھا اور پھر کافی عرصہ کے بعد شوکی برادران پر مشتمل سیریز لکھی گئی اور ان تینوں کا خاص نمبر تو اپنے آپ تھا میں نے اشتیاق احمد سے بہت کچھ سیکھا لکھنا پڑھنا اور آج جو کچھ لکھ رہا ہوں ان کی توسط سے ہی لکھ رہا ہوں ان سے میرے خط و کتابت بھی رہی میں نے ان کو اپنا ناول اسکرپٹ اور کریکٹر بھی بھیجے جو انہوں نے منظور کرلئے ہیں ان کا ایک خط ان کے دستخط کے ساتھ ابھی تک میرے پاس موجود ہے اور میں ان کی نشانی کے طور پر ابھی تک اس کو سنبھال کر رکھا ہوا ہے مجھے کیا پتہ تھا کہ یہ خط میرے پاس ان کی آخری نشانی کے طور پر رہ جائے گ